Hai Kiyon Ankhoon Main Veerani Na Pocho

ہے کیوں آنکھوں میں ویرانی، نہ پوچھو

ہے کیوں آنکھوں میں ویرانی، نہ پوچھو

مرے دل کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بیابانی نہ پوچھو

عُدو ۔۔۔۔۔۔۔۔ ہمدم تھا بس کچھ دیر پہلے

بدلتی خُوئے انسانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ پوچھو

قفس کیوں جان سے پیارا ہوا ہے

ہوئے ہیں کس کے زندانی نہ پوچھو

بہا لے جاتا اس کون و مکاں کو

جو روکا آنکھ میں پانی، نہ پوچھو

مجھے مسمار کر کے، ہے پشیماں

پشیماں کی پشیمانی ۔۔۔۔۔۔ نہ پوچھو

سمجھتا ہے وہ ، میری ان کہی کو

مہرباں کی ، سخن دانی نہ پوچھو

بھٹکنے ہی نہیں دیتی ہیں نسریؔں

اُن آنکھوں کی نگہبانی ، نہ پوچھو

نسرین سید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(511) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nasreen Syed, Hai Kiyon Ankhoon Main Veerani Na Pocho in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nasreen Syed.