Tohfa Yahi Bas Un Ki Mulaqat Se Mila

تحفہ یہی بس ان کی ملاقات سے ملا

تحفہ یہی بس ان کی ملاقات سے ملا

دنیا جہاں کا درد میری ذات سے ملا

دِل بھی اُسی نے توڑ کر رسوا کیا مگر

جینے کا حوصلہ بھی اُسی مات سے ملا

تشبیہِ زلفِ یار ہی مقصود ہے تو پھر

میرے نصیب کی سیاہ رات سے ملا

یکسر اجڑ گیا ہے تو مجھ سے گلہ نہ کر

میں نے کہا تھا خواب خیالات سے ملا؟

میں جانتا ہوں بالیقیں اہلِ زُبان کو !!!!

سرگوشیوں کا لفظ تیری بات سے ملا

اِس مرحلے میں عشق کا ہونا ہے لازمی

اب مشترک چیزوں کو احتیاط سے ملا

اِ ک اور رُخ سے دیکھئے، طوفان کے طفیل

ٹوٹا ہوا وہ پھول خشک پات سے ملا

جو میرے گریبان میں پیوست تھا ذکی ؔ

مجھ کو میرا پتا بھی اُسی ہاتھ سے ملا

ذیشان احمد ذکی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(430) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Zeeshan Ahmad Zaki, Tohfa Yahi Bas Un Ki Mulaqat Se Mila in Urdu. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Zeeshan Ahmad Zaki.