Lazim Tha

لازم تھا

جو لکھا تھا اسے پہلے مٹانا بھی تو لازم تھا

کہانی کو مقدر سے ملانا بھی تو لازم تھا

یہ لگتا ہے نگاہیں ترجمانی کر نہیں پائیں

محبت تھی تو پھر اس کو بتانا بھی تو لازم تھا

تمہارے بعد پاگل ہوں، مگر یہ کہہ نہیں سکتا

تمہاری یاد لازم تھی، زمانہ بھی تو لازم تھا

مزارِ عشق پہ کب تک یونہی بے فیض بیٹھو گے

چراغِ حسرتِ جاناں، جلانا بھی تو لازم تھا

یونہی طوفان آنے سے کسی کا کیا بگڑ جاتا

سمجھنے کے لئے اک آشیانہ بھی تو لازم تھا

وہ ناصح تھا اسے اہلِ وفا کے غم سے کیا مطلب

اسے کیا علم کہ پینا پلانا بھی تو لازم تھا

ذکیؔ الفاظ سے کب تک سخن اپنا بچا لیتا

تخیل میں تمہارا آنا جانا بھی تو لازم تھا

ذیشان احمد ذکی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(333) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Zeeshan Ahmad Zaki, Lazim Tha in Urdu. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Zeeshan Ahmad Zaki.