Gul Ne Khushbu Ko Taj Diya Nah Raha

گل نے خوشبو کو تج دیا نہ رہا

گل نے خوشبو کو تج دیا نہ رہا

خود سے خود کو کیا جدا نہ رہا

رات دیکھے سفر کے خواب بہت

پو پھٹی جب تو حوصلہ نہ رہا

قافلہ اس کے دم قدم سے تھا

چل دیا وہ تو قافلہ نہ رہا

ربط اس کا زماں سے کیا رہتا

جب زمیں ہی سے سلسلہ نہ رہا

ترک کر خامشی کا مسلک سن

ہو گیا جو بھی بے صدا نہ رہا

عمر بھر اس نے بے وفائی کی

عمر سے بھی وہ باوفا نہ رہا

آنکھ کھولی تو دوریاں تھیں بہت

آنکھ میچی تو فاصلہ نہ رہا

کس کی خوشبو نے بھر دیا تھا اسے

اس کے اندر کوئی خلا نہ رہا

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(976) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Gul Ne Khushbu Ko Taj Diya Nah Raha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.