Mujhe Jane Do

مجھے جانے دو

شام کو پرندے ، درختوں پر

اور مسافر

کسی سرائے میں اترتے ہیں

آنسو --- آنکھوں کو

اور یادیں --- دلوں کو چھوڑ دیتی ہیں

گھر سے نکلنے والا...ایک دن لوٹا دیا جاتا ہے

مچھلیاں --- اپنے اصل پانیوں کو واپس جاتی ہیں

ریت پر پھینک کر تماشا مت دیکھو

مجھے جانے دو --

ماربل کے چکنے فرش

پہیوں اور رفتار کے چکر سے

خوش حالی اور آسائش کے دھوکے سے

ٹھوس لکڑی کی میخوں لگی قید

آہنی دروازوں

کشادہ سڑکوں پر نپی تلی

چہل قدمیوں سے ---

رات بھر

میں دیے جلاتا ہوں ، ان قبروں پر

جو میرے دل میں

بنتی جا رہی ہیں

اور دن بھر

آنکھوں میں چراغ لیے

ایک ایسی رات میں پھرتا رہتا ہوں

جس کے کنارے معدوم نہیں ہوتے

میں دیکھتا نہیں ہوں

ہنستا روتا نہیں

کام ، کام نہیں

فراغت ، فراغت نہیں

میں ، میں نہیں

کوئی سایہ ہے

جو میرے ساتھ گھبرایا پھرتا ہے

تارکول کی سڑکوں پر

تیز جلتی روشنیوں

لوگوں اور موٹروں سے بھری

شاہراہوں پر---

دور کہیں ہوا چلتی ہے

پتوں کو اڑاتی ہوئی

سرد چولہے کے پاس

لالٹین کی لو تھرتھراتی ہے

کھڑکیاں کھلنے

اور بند ہونے کی آوازیں آتی ہیں

کسی اور آسمان پر بجلی چمکتی ہے

جو نہ جانے کن زمینوں کو روشن کرتی

کن دلوں کو ڈراتی ہے

ایک جانی ، انجانی بارش

مجھے اپنی جانب بلاتی ہے

مسلسل ، لگاتار، موسلا دھار ------

کسی اور طرف کے لوگوں کی جانب

کہیں اور کی اینٹوں کی ہمیشگی کی طرف

ان دروازوں تک

جو میری دستک کے انتظار میں ہیں

مجھے جانے دو .....

ابراراحمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(514) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abrar Ahmad, Mujhe Jane Do in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 93 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abrar Ahmad.