Bahar Ayi Hai Mastana Ghata Koch Aur Kehti Hai

بہار آئی ہے مستانہ گھٹا کچھ اور کہتی ہے

بہار آئی ہے مستانہ گھٹا کچھ اور کہتی ہے

مگر ان شوخ نظروں کی حیا کچھ اور کہتی ہے

رہائی کی خبر کس نے اڑائی صحن گلشن میں

اسیران قفس سے تو صبا کچھ اور کہتی ہے

بہت خوش ہے دل ناداں ہوائے کوے جاناں میں

مگر ہم سے زمانے کی ہوا کچھ اور کہتی ہے

تو میرے دل کی سن آغوش بن کر کہہ رہا ہے کچھ

تری نیچی نظر تو جانے کیا کچھ اور کہتی ہے

مری جانب سے کہہ دینا صبا لاہور والوں سے

کہ اس موسم میں دہلی کی ہوا کچھ اور کہتی ہے

ہوئی مدت کے مے نوشی سے توبہ کر چکے اخترؔ

مگر دہلی کی مستانہ فضا کچھ اور کہتی ہے

اختر شیرانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1300) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Sheerani, Bahar Ayi Hai Mastana Ghata Koch Aur Kehti Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 82 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Sheerani.