Omar Bhar Ki Talkh Baydari Ka Saman Ho Gayain

عمر بھر کی تلخ بیداری کا ساماں ہو گئیں

عمر بھر کی تلخ بیداری کا ساماں ہو گئیں

ہائے وہ راتیں کہ جو خواب پریشاں ہو گئیں

میں فدا اس چاند سے چہرے پہ جس کے نور سے

میرے خوابوں کی فضائیں یوسفستاں ہو گئیں

عمر بھر کم بخت کو پھر نیند آ سکتی نہیں

جس کی آنکھوں پر تری زلفیں پریشاں ہو گئیں

دل کے پردوں میں تھیں جو جو حسرتیں پردہ نشیں

آج وہ آنکھوں میں آنسو بن کے عریاں ہو گئیں

کچھ تجھے بھی ہے خبر او سونے والے ناز سے

میری راتیں لٹ گئیں نیندیں پریشاں ہو گئیں

ہائے وہ مایوسیوں میں میری امیدوں کا رنگ

جو ستاروں کی طرح اٹھ اٹھ کے پنہاں ہو گئیں

بس کرو او میری رونے والی آنکھوں بس کرو

اب تو اپنے ظلم پر وہ بھی پشیماں ہو گئیں

آہ وہ دن جو نہ آئے پھر گزر جانے کے بعد

ہائے وہ راتیں کہ جو خواب پریشاں ہو گئیں

گلشن دل میں کہاں اخترؔ وہ رنگ نو بہار

آرزوئیں چند کلیاں تھیں پریشاں ہو گئیں

اختر شیرانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(964) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Sheerani, Omar Bhar Ki Talkh Baydari Ka Saman Ho Gayain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 82 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Sheerani.