Jab Tak Yeh Mohabbat MeiN Badnaam NahiN Hota

جب تک یہ محبت میں بد نام نہیں ہوتا

جب تک یہ محبت میں بد نام نہیں ہوتا

اس دل کے تئیں ہرگز آرام نہیں ہوتا

عالم سے ہمارا کچھ مذہب ہی نرالا ہے

یعنی ہیں جہاں ہم واں اسلام نہیں ہوتا

کب وعدہ نہیں کرتیں ملنے کا تری آنکھیں

کس روز نگاہوں میں پیغام نہیں ہوتا

بال اپنے بڑھاتے ہیں کس واسطے دیوانے

کیا شہر محبت میں حجام نہیں ہوتا

ملتا ہے کبھی بوسہ نے گالی ہی پاتے ہیں

مدت ہوئی کچھ ہم کو انعام نہیں ہوتا

ساقی کے تلطف نے عالم کو چھکایا ہے

لبریز ہمارا ہی اک جام نہیں ہوتا

کیوں تیرگیٔ طالع کچھ تو بھی نہیں کرتی

یہ روز مصیبت کا کیوں شام نہیں ہوتا

پھر میری کمند اس نے ڈالے ہی تڑائی ہے

وہ آہوئے رم خوردہ پھر رام نہیں ہوتا

نے عشق کے قابل ہیں نے زہد کے درخور ہیں

اے مصحفیؔ اب ہم سے کچھ کام نہیں ہوتا

غلام ہمدانی مصحفی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1618) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hamdani Mushafi, Jab Tak Yeh Mohabbat MeiN Badnaam NahiN Hota in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hamdani Mushafi.