Ashiq Sa Bad Naseeb Koi Dosra Nah Ho

عاشق سا بد نصیب کوئی دوسرا نہ ہو

عاشق سا بد نصیب کوئی دوسرا نہ ہو

معشوق خود بھی چاہے تو اس کا بھلا نہ ہو

ہے مدعائے عشق ہی دنیائے مدعا

یہ مدعا نہ ہو تو کوئی مدعا نہ ہو

عبرت کا درس ہے مجھے ہر صورت فقیر

ہوتا ہے یہ خیال کوئی بادشاہ نہ ہو

پایان کار موت ہی آئی بروئے کار

ہم کو تو وصل چاہیئے کوئی بہانہ ہو

میرے عزیز مجھ کو نہ چھوڑیں گے قبر تک

اے جان انتظار نہ کر تو روانہ ہو

کعبے کو جا رہا ہوں نگہ سوئے دیر ہے

ہر پھر کے دیکھتا ہوں کوئی دیکھتا نہ ہو

ہاں اے حفیظؔ چھیڑتا جا نغمۂ حیات

جب تک ترا رباب سخن بے صدا نہ ہو

حفیظ جالندھری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1524) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hafeez Jalandhari, Ashiq Sa Bad Naseeb Koi Dosra Nah Ho in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 104 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hafeez Jalandhari.