Ameen O Sadiq Kahan Khare Hain

امین و صادق کہاں کھڑے ہیں

سُنا ہے تبدیلی آرہی ہے

پُرانے چہروں سے تنگ آکر

میں گھر سے نکلا ہوں ووٹ دینے

مگر یہاں پر عجیب صورت بنی ہوئی ہے

پُرانے چہرے ہی دِ کھ رہے ہیں

وہی لٹیرے جو کچھ ٹکوں کا سہارا لے کر غریب کا حق خریدتے ہیں

وہی درندے جو بنتِ حوا کو نوچتے ہیں

خدا نے جن کی بصارتوں اور سماعتوں پر لگا کے مہریں نشانِ عبرت بنا دیا ہے

کہ دستِ رحمت سروں سے ان کے اٹھا دیا ہے

انہی کے نعرے سماعتوں کو چڑا رہے ہیں

عجب قیامت لہو کے اندر اٹھا رہے ہیں

میں بے دلی کے حصار میں ہوں

میں ووٹ ڈالوں یا اپنی پرچی کو پھاڑ ڈالوں

سوال دل میں یہ آرہاہے

جومجھ کو اندر سے کھارہاہے

امین و صادق کہاں کھڑے ہیں

امین و صادق کہاں کھڑے ہیں

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(396) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Ameen O Sadiq Kahan Khare Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.