Mere Raat Din Kabhi Yun Bhi Thay Kayi Khawab Mere Daroon Bhi Thay

مرے رات دن کبھی یوں بھی تھے کئی خواب میرے دروں بھی تھے

مرے رات دن کبھی یوں بھی تھے کئی خواب میرے دروں بھی تھے

یہ جو روز و شب ہیں قرار میں یہی پہلے وقف جنوں بھی تھے

مرا دل بھی تھا کبھی آئنہ کسی جام جم سے بھی ماورا

یہ جو گرد غم سے ہے بجھ گیا اسی آئنے میں فسوں بھی تھے

یہ مقام یوں تو فغاں کا تھا پہ ہنسے کہ طور جہاں کا تھا

تھا بہت کڑا یہ مقام پر کئی ایک اس سے فزوں بھی تھے

ابھی عقل آ بھی گئی تو کیا ابھی ہنس دیے بھی تو کیا ہوا

ہمی دشت عشق نورد تھے ہمی لوگ اہل جنوں بھی تھے

یہ جو سیل غم سر چشم نم ہے رواں دواں کئی روز سے

اسے کیا خبر اسی دشت میں کئی خواب محو‌ سکوں بھی تھے

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1123) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Mere Raat Din Kabhi Yun Bhi Thay Kayi Khawab Mere Daroon Bhi Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.