Koi Meherban Nahi Sath Main Koi Hat Bhi Nahi Hath Main

کوئی مہرباں نہیں ساتھ میں کوئی ہاتھ بھی نہیں ہاتھ میں

کوئی مہرباں نہیں ساتھ میں کوئی ہاتھ بھی نہیں ہاتھ میں

ہیں اداسیاں مری منتظر سبھی راستوں میں جہات میں

ہے خبر مجھے کہ یہ تم نہیں کسی اجنبی کو بھی کیا پڑی

سبھی آشنا بھی ہیں روبرو تو یہ کون ہے مری گھات میں

یہ اداسیوں کا جو رنگ ہے کوئی ہو نہ ہو مرے سنگ ہے

مرے شعر میں مری بات میں مری عادتوں میں صفات میں

کریں اعتبار کسی پہ کیا کہ یہ شہر شہر نفاق ہے

جہاں مسکراتے ہیں لب کہیں وہیں طنز ہے کسی بات میں

چلو یہ بھی مانا اے ہم نوا کہ تغیرات کے ماسوا

نہیں مستقل کوئی شے یہاں تو یہ ہجر کیوں ہے ثبات میں

مری دسترس میں بھی کچھ نہیں، نہیں تیرے بس میں بھی کچھ نہیں

میں اسیر کاکل عشق ہوں مجھے کیا ملے گا نجات میں

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(789) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Koi Meherban Nahi Sath Main Koi Hat Bhi Nahi Hath Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.