Kuch Nahi Aftab Rozan Hai

کچھ نہیں آفتاب روزن ہے

کچھ نہیں آفتاب روزن ہے

ساتھ والا مکان روشن ہے

یہ ستارے چہکتے ہیں کتنے

آسماں کیا کسی کا آنگن ہے

چاندنی ہے سفیر سورج کی

چاند تو ظلمتوں کا مدفن ہے

آگ ہے کوہسار کے نیچے

برف تو پیرہن ہے اچکن ہے

دائمی زندگی کی ہے ضامن

یہ فنا جو بقا کی دشمن ہے

یاد تار نفس پہ چڑیا ہے

وحشتوں کا شمار دھڑکن ہے

بھیگتا ہوں تمہاری یادوں میں

خط تمہارا مجھے تو ساون ہے

دیکھتا ہوں بچھڑنے والوں کو

خواب گویا کہ دور درشن ہے

نخل گل ہو کسی کا مجھ کو کیا

مجھ کو تو خار و خس ہی گلشن ہے

تک رہا ہوں جہاں کو حیرت سے

مجھ میں جاگا یہ کیسا بچپن ہے

آپ مجھ کو ہی ڈھونڈتے ہوں گے

سب سے پتلی مری ہی گردن ہے

ہنس دئے میری بات سن کر وہ

مسکرا کر کہا کہ بچپن ہے

احمدؔ اپنی مثال آپ ہوں میں

ہاں مرا شعر میرا درپن ہے

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(392) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Kuch Nahi Aftab Rozan Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.