Nazm Kahani

نظم کہانی

کہانی کار!

تم نے مجھے بہت سی نظمیں دی ہیں

اس کے باوجود کہ میں تمہارا لفظ نہیں

ہوا کو سپاس نامہ پیش کرتے ہوئے

میں نے کئی بار کھڑکی سے باہر جھانکا

اداسی بہت دبیز تھی

مگر میں جانتا ہوں

راستے ترتیب دیتے ہوئے

آنکھیں ہمیشہ مصلحت کے غبار میں گم ہو جاتی ہیں

تمہیں دریا بنے بغیر سمندر سے ملنا آتا ہے

تو پھر مان لو

اَن بہے آنسو بھی عظیم ہو سکتے ہیں

دکھ کسی ایک کا نہیں ہوتا

دکھ تو سب کے ہوتے ہیں

لیکن یقین اور اظہار کے درمیان آنکھوں میں

ایک نمی سی تیرتی رہتی ہے

بارشیں پرائی سرزمینوں پر برسنا چاہتی ہوں

تو انہیں کون روک سکتا ہے

اعتراف کے بغیر سب رشتے بے یقین رہتے ہیں

اگر لفظوں کے بغیر کچھ لکھا جا سکتا

تو مَیں تمہارے لیے بھی ایک نظم لکھتا

کہانی کار!

جب تمہاری آنکھوں کے آسمان میں

آنسوؤں کی روشنائی سوکھ جائے

اور بدن کی زمین کا ملبوس بوڑھا ہونے لگے

اور تم کسی اور وجود کا چولا بدلنے کے لیے

اگلی بار آؤ

تو اپنی کہانی لکھتے ہوئے

ایک کردار میرے نام سے ضرور لکھنا

کیونکہ اگلی بار میں نہیں ہوں گا

میں تو پچھلی بار بھی نہیں تھا

اور اِس بار بھی نہیں ہوں

لیکن تمہیں خواب لکھنے کا تجربہ نہیں

تم نے صرف تعبیریں دیکھی ہیں

کہانی کار!

تم نے ابھی نظم نہیں لکھی!!

نصیر احمد ناصر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(451) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Naseer Ahmed Nasir, Nazm Kahani in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Naseer Ahmed Nasir.