Hawa Per Teri Nazmain Phar K Pehem Phonkti Thi

ہوا پر تیری نظمیں پڑھ کے پیہم پھونکتی تھی

ہوا پر تیری نظمیں پڑھ کے پیہم پھونکتی تھی

میں خود بےبرگ تھی پر سب پہ موسم پھونکتی تھی

میں اپنی بہن کو لے جایا کرتی تھی چمن میں

وہاں پھولوں کے دروازے پہ سِم سِم پھونکتی تھی

بلا تفریق_ رنگ و نسل و مذہب پیار کرتی

میں اپنی گل زمیں کا عکس دائم پھونکتی تھی

سمندر بجریوں سے پتھروں سے بھر گیا تھا

زمیں بھی سرد تھی لیکن جہنُم پھونکتی تھی

مُلائم خواب زاروں جیسا دنیا کو بنانے

میں سانسوں پر بلوچستاں کا پرچم پھونکتی تھی

میں لا موجود سے موجود میں آنے سے پہلے

کسی ویراں سڑک پر ہجر کا دَم پھونکتی تھی

زمانے بھر کے زخموں پر سد ا رژنا کی دادی

محبت کی جڑی بوٹی کا مرہم پھونکتی تھی

وہ میری شاعرہ، میری سہیلی قند_ آہنگ

مِری بنجر خِلا میں فکر کا نَم پھونکتی تھی

محبت نیم شب باغِ بہاراں سے نکل کر

کنارِ صُبح گلزاروں پہ ماتم پھونکتی تھی

کسی کے راستے میں اژدھے تھے بھوکے پیاسے

کسی کی راہ میں کوئل ترنم پھونکتی تھی

قندیل بدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(889) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qandeel Badar, Hawa Per Teri Nazmain Phar K Pehem Phonkti Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Funny, Bewafa, Heart Broken, Birthday Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Funny, Bewafa, Heart Broken, Birthday poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qandeel Badar.