Mere Humsafar Koi Baat Kar Ke Safar Hamara Hai Mukhtasar, Urdu Ghazal By Qazi Zaheer Ahmad

Mere Humsafar Koi Baat Kar Ke Safar Hamara Hai Mukhtasar is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Qazi Zaheer Ahmad. Mere Humsafar Koi Baat Kar Ke Safar Hamara Hai Mukhtasar comes under the Love, Heart Broken category of Urdu Ghazal. You can read Mere Humsafar Koi Baat Kar Ke Safar Hamara Hai Mukhtasar on this page of UrduPoint.

مرے ہمسفر کوئی بات کر، کہ سفر ہمارا ہے مختصر

قاضی ظہیر احمد

مرے ہمسفر کوئی بات کر، کہ سفر ہمارا ہے مختصر

جو بچھڑ گئے وہ نہ مل سکے، نہ ہواؤں میں، نہ زمین پر

مرے دلربا بڑی چاہ سے تجھے آ لیا، تجھے پا لیا

مر ی چشم ۔ تر کے گواہ ہیں مرے ہم نشیں، میرے بام و در

زرا دیکھ! حد ۔ نگاہ سے، وہ نہ ہو چلیں کہیں دور پھر

تو قدم بڑھا، زرا تیز چل، میرے قاصدا، میرے نامہ بر

مجھے دوش مت دے اے گل بدن، میری اپنی کوئی خطا نہیں

تجھے دل نے سارے جہان میں جو سمجھ لیا میرا چارہ گر

نہ بشر ہے کوئی بچا ہوا، نہ پرند ہیں، نہ چرند ہیں

یہ جو خاک پانی میں گوندھ کر، پڑھے دم، رکھے ہمیں چاک پر

یہ جو الفتیں ہیں کمال پر، یہ وصال سارے جہان میں

وہ فلک سے نیچے ہے دیکھتا وہی ایک سب کا ہے کوزہ گر

قاضی ظہیر احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2779) ووٹ وصول ہوئے

You can read Mere Humsafar Koi Baat Kar Ke Safar Hamara Hai Mukhtasar written by Qazi Zaheer Ahmad at UrduPoint. Mere Humsafar Koi Baat Kar Ke Safar Hamara Hai Mukhtasar is one of the masterpieces written by Qazi Zaheer Ahmad. You can also find the complete poetry collection of Qazi Zaheer Ahmad by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Qazi Zaheer Ahmad' above.

Mere Humsafar Koi Baat Kar Ke Safar Hamara Hai Mukhtasar is a widely read Urdu Ghazal. If you like Mere Humsafar Koi Baat Kar Ke Safar Hamara Hai Mukhtasar, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Love Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.