Kahin Akailey Mein Mil Kar Jhinjhod Dun Ga Usay

کہیں اکیلے میں مل کر جھنجھوڑ دوں گا اسے

کہیں اکیلے میں مل کر جھنجھوڑ دوں گا اسے

جہاں جہاں سے وہ ٹوٹا ہے جوڑ دوں گا اسے

مجھے وہ چھوڑ گیا یہ کمال ہے اس کا

ارادہ میں نے کیا تھا کہ چھوڑ دوں گا اسے

بدن چرا کے وہ چلتا ہے مجھ سے شیشہ بدن

اسے یہ ڈر ہے کہ میں توڑ پھوڑ دوں گا اسے

پسینے بانٹتا پھرتا ہے ہر طرف سورج

کبھی جو ہاتھ لگا تو نچوڑ دوں گا اسے

مزہ چکھا کے ہی مانا ہوں میں بھی دنیا کو

سمجھ رہی تھی کہ ایسے ہی چھوڑ دوں گا اسے

راحت اندوری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1723) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rahat Indori, Kahin Akailey Mein Mil Kar Jhinjhod Dun Ga Usay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 98 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rahat Indori.