6 Maah Ka Wo Bebas O Masoom Sherkhawar

چھ ماہ کا وہ بے بس و معصُوم شیرخوار

چھ ماہ کا وہ بے بس و معصُوم شیرخوار

روتا بلکتا بے کس و مظلُوم شیرخوار

سائے سے دُور، پانی سے محرُوم شیرخوار

وہ بے زبان و کم سِن و مغمُوم شیرخوار

آواز پر تھیں تشنہ دھانی کی بیڑیاں

پیاسا تڑپ تڑپ کے رگڑتا تھا ایڑیاں

جب دل کو چیرنے لگی معصُوم کی کراہ

بانہوں میں لے چلے پسَرِ تشنہ لب کو شاہ

دُھندلا رھی تھی اشکِ بلاخیز سے نگاہ

کچھ دُور خیمہ زن تھی سِتَم آشنا سپاہ

سوچا کہ لُو لگے نہ کہیں گُلعذار کو

مل جائے تھوڑا پانی مِرے شیرخوار کو

اصغر کو ساتھ لے تو گئے سرورِ زماں

لیکن سوال آ نہ سکا برسرِ زباں

چُومِیں بلکتے بچّے کے ھونٹوں کی پپڑیاں

پھر بولے فوجِ بد سے کہ اَے جَیشِ گُمرَھاں !

ھم تشنہ لب ضرُور ھیں، بے آسرا نہیں

خود بولو اھلِ بیتِ مُحمّد ھیں یا نہیں ؟؟

ھم حُکم دیں تو چشمۂ کوثر اُبل پڑے

ابرُو ھلیں تو سلسلۂ ابر چل پڑے

ھلکا سا گر ھماری جبینوں پہ بل پڑے

اپنے کنارے توڑ کے دریا نکل پڑے

تُم کیا سمجھ رھے ھو کہ مُحتاجِ آب ھیں ؟

ھم خاندانِ ساقئ روزِ حساب ھیں !

گر ھم کہَیں تو آبِ بقا لائیں جبرئیل

صحرا کے دِل سے پُھوٹ بہے دُودھ کی سبیل

پھر بھی یہ ضبط ھے تو ھے سچّائی کی دلیل

ایسے ھُوئے ھیں راضی کہ جیسے ھُوئے خلیل

سہہ لیں گے بُھوکے پیاسے ھم انجامِ کربلا

لیکن یہ بچّہ اور یہ آلام کربلا ؟؟؟

ھم تُم میں ٹَھن گئی ھے تو اس کا نہیں قصُور

چھ ماہ اس کی عُمر ھے، اے فُوجِ پُرفُتور !

معصُوم انکھڑیوں سے بُجھا جا رھا ھے نُور

مُنّے سے حلق میں ھے فقط پیاس کا وفُور

چھوٹا سا ھے سو تشنہ لبی سہہ نہ پائے گا

یہ بے زباں زبان سے کچھ کہہ نہ پائے گا

دیتا ھے اپنی جاں، مرے بیٹے کو روک لو

پیاسا ھی چل پڑا، ارے پیاسے کو روک لو

اس بھولے بھالے بُجھتے ستارے کو روک لو

اے ظالمو ! سُنو، مرے بچّے کو روک لو

جُز اشک پاس کچھ نہیں ننّھی سی جان کے

کانٹے دکھا نہ پائے گا سُوکھی زبان کے !

یہ کہہ کے چُپ ھُوئے جو شہِ آسماں سریر

چلّے میں خُوب کھینچ کے مارا کسی نے تیر

یک لخت چِھد گیا گلُوئے اصغرِ صغیر

ھونٹوں سے خُون اُبلا، نہ پانی ملا نہ شِیر

پیاسا تھا تین دن کا، وھیں تھک کے سو گیا

بیٹا پِدَر کی گود میں ھی ذبح ھوگیا !

ٹُوٹا عجیب ظُلم و ستَم شیرخوار پر

لگتے ھی تیر ھوگیا کُرتا لہُو میں تر

چھوٹے سے ھاتھ پاؤں میں جاں تو نہ تھی مگر

آنکھوں کی پُتلیوں میں تھی حسرت بھری نظر

باقی نہ ایک سانس بھی ننّھے بدن میں تھا

باچھیں تھیں خُشک اور انگوٹھا دھن میں تھا

لختِ جگر کا لاشہ اُٹھا کر چلے حُسَین

صدمے سے جاں بلب تھے شہنشاہِ مشرقَین

خیموں میں پہنچے لے کے جُونہی جسمِ نُور عَین

جنگل میں گُونج اُٹّھے بنی فاطمہ کے بَین

بانو تو ماں تھیں، صدمے سے غش کھا کے گِر پڑیں

زینب وفورِ درد سے تھرّا کے گر پڑیں

کھودی وھیں امام نے چھوٹی سی ایک قبر

صد حَیف اھلِ بَیت پہ تاریخ کا یہ جبر

دفنادیا تو رونے لگے آس پاس ابر

لی جُھرجُھری زمیں نے تو شہ بولے: صبر صبر

پیاسا ھی سوگیا ھے، سو لوری سُنائے جا

تاحشر میرے لال کو جُھولا جُھلائے جا !

بانو کو ھوش آیا تو بولیں بحالِ زار

ننّھی سی جان قبر میں ھے، ھائے ماں نثار

اصغر تو شب میں نیند سے اُٹھتا ھے باربار

خود کو اکیلا پا کے بہت ھوگا بےقرار

کروٹ بھی لے نہ پائے گا، سو بھی نہ پائے گا

ماں صدقے، میرا بچہ تو رو بھی نہ پائے گا

رحمان فارس

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1132) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rehman Faris, 6 Maah Ka Wo Bebas O Masoom Sherkhawar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Marsiya, and the type of this Nazam is Islamic Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Islamic poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rehman Faris.