Yun To Hanstay Howay Larkoon Ko Bhi Gham Hota Hai

یوں تو ہنستے ہوئے لڑکوں کو بھی غم ہوتا ہے

یوں تو ہنستے ہوئے لڑکوں کو بھی غم ہوتا ہے

کچی عمروں میں مگر تجربہ کم ہوتا ہے

سگرٹیں چائے دھواں رات گئے تک بحثیں

اور کوئی پھول سا آنچل کہیں نم ہوتا ہے

اس طرح روز ہم اک خط اسے لکھ دیتے ہیں

کہ نہ کاغذ نہ سیاہی نہ قلم ہوتا ہے

ایک ایک لفظ تمہارا تمہیں معلوم نہیں

وقت کے کھردرے کاغذ پر رقم ہوتا ہے

وقت ہر ظلم تمہارا تمہیں لوٹا دے گا

وقت کے پاس کہاں رحم و کرم ہوتا ہے

فاصلہ عزت و رسوائی میں والیؔ صاحب

سنتے آئے ہیں کہ بس چند قدم ہوتا ہے

والی آسی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(359) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of WALI AASI, Yun To Hanstay Howay Larkoon Ko Bhi Gham Hota Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of WALI AASI.