Bhoolay Bisray Howay Gham Yad Bohat Karta Hai

بھولے بسرے ہوئے غم یاد بہت کرتا ہے

بھولے بسرے ہوئے غم یاد بہت کرتا ہے

میرے اندر کوئی فریاد بہت کرتا ہے

روز آتا ہے جگاتا ہے ڈراتا ہے مجھے

تنگ مجھ کو مرا ہم زاد بہت کرتا ہے

مجھ سے کہتا ہے کہ کچھ اپنی خبر لے بابا

دیکھ تو وقت کو برباد بہت کرتا ہے

نکلی جاتی ہے مرے پاؤں کے نیچے سے زمیں

آسماں بھی ستم ایجاد بہت کرتا ہے

کچھ تو ہم صبر و رضا بھول گئے ہیں شاید

اور کچھ ظلم بھی صیاد بہت کرتا ہے

اس کے جیسا تو کوئی چاہنے والا ہی نہیں

کر کے پابند جو آزاد بہت کرتا ہے

بستیوں میں وہ کبھی خاک اڑا دیتا ہے

کبھی صحراؤں کو آباد بہت کرتا ہے

غم کے رشتوں کو کبھی توڑ نہ دینا والیؔ

غم خیال دل نا شاد بہت کرتا ہے

والی آسی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(411) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of WALI AASI, Bhoolay Bisray Howay Gham Yad Bohat Karta Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of WALI AASI.