Mein Jab Chhota Sa Tha Kaghaz Pay Yeh Manzar Banata Tha

میں جب چھوٹا سا تھا کاغذ پہ یہ منظر بناتا تھا

میں جب چھوٹا سا تھا کاغذ پہ یہ منظر بناتا تھا

کھجوروں کے درختوں کے تلے اک گھر بناتا تھا

میں آنکھیں بند کر کے سوچتا رہتا تھا پہروں تک

خیالوں میں بہت نازک سا اک پیکر بناتا تھا

میں اکثر آسماں کے چاند تارے توڑ لاتا تھا

اور اک ننھی سی گڑیا کے لیے زیور بناتا تھا

اڑا کر روز لے جاتی تھیں موجیں میرے خوابوں کو

مگر میں بھی گھروندے روز ساحل پر بناتا تھا

مری بستی میں میرے خون کے پیاسے تھے سب لیکن

نہ میں تلوار گڑھتا تھا نہ میں خنجر بناتا تھا

ہدایت کار اس دنیا کے ناٹک میں مجھے والیؔ

کبھی ہیرو بناتا تھا کبھی جوکر بناتا تھا

والی آسی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(741) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of WALI AASI, Mein Jab Chhota Sa Tha Kaghaz Pay Yeh Manzar Banata Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of WALI AASI.