بند کریں
ادب مضامین

مزید عنوان

اردو ادب میں نیا اضافہ

توبہ اور ندامت کی کوئی قیمت نہیں

احمقوں کے وعدوں اور دعوؤں کا کچھ اعتبار نہیں۔ قرآن مجید ہے کہ اگر ان کو دوبارہ زندگی بھی دی جائے تو یہ بدعہدی کریں گے۔ عہدوں کی وفا کرنا توعقل مندوں کا کام ہے۔ پروانے میں عقل کی کمی ہے جس کی وجہ سے وہ شمع کی آگ کی سوزش کو بھول جاتا ہے۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

درویش کی منت

حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ علیہ ایک درویش کا قصہ بیان کرتے ہیں کہ اس کی بیوی حاملہ تھی اس نے منت مانگی کہ اگر میرے گھر نرینہ اولاد ہوئی تو میں اپنے پاس موجود گوڈری کے علاوہ جو کچھ ہے سب صدقہ کردوں گا۔ وہ درویش بڑھاپے کو پہنچ چکا تھا اور اس سے قبل اس کے ہاں کوئی اولاد نہ تھی۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

خوف اور بھلائی کی کشمکش

اے ضیاء الحق حسام الدین ‘ مثنوی کو کشادہ میدان عطا کردیجئے۔ دنیا میں آپ رحمتہ اللہ علیہ حضرت خضر علیہ السلام کی مانند ہیں کہ آپ رحمتہ اللہ علیہ پریشان لوگوں کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں، اور بے کسوں کی دستگیری فرماتے ہیں۔ لوگوں کی نظربد کی وجہ سے میں آپ رحمتہ اللہ علیہ کے معمولی احوال کا بیان نہیں کرتا۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

کمزوروں سے خیر خواہی کرو

حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ علیہ عجم کے ایک بادشاہ کی کہانی بیان کرتے ہیں کہ وہ اپنی رعایا اس قدر ظلم کرتا تھا کہ اس کی رعایا ملک چھوڑ کردوسرے ممالک میں آباد ہوناشروع ہوگئی۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

تحریک پاکستان میں شعراء اور ادباء کا کردار

جشن آزادی کے موقع پر سرکردہ ادبی شخصیات کااظہار خیال
شب ظلمت میں گزاری ہے ‘ اٹھ وقت بیداری ہے

"مضمون" میں شائع کیا گیا

حق تعالیٰ کی ذات بہت ہی غفورورحیم ہے

حضور نبی کریم ﷺ کا فرمان ہے کہ عورت عقل مندا ورصاحب دل لوگوں پر غالب رہتی ہے برخلاف اس کے کہ جاہل لوگ عورتوں پر غلبہ پاتے ہیں کیونکہ وہ سختی اور اکھڑ پن میں زندگی بسر کرتے ہیں۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

ادب و ثقافت

”ادب و ثقافت انٹرنیشنل“ کا پندرھواں شمارہ موصول ہوا۔ ”ادب و ثقافت“ کا نام تو پہلے سے سن رکھا تھا لیکن دیکھنے کا اتفاق پہلی بار ہوا۔ ”ادب و ثقافت“ بیاد بیدل حیدری شائع کیا جاتا ہے۔ اردو دنیا میں بیدل حیدری مرحوم کے نام سے کون واقف نہ ہو گا۔ مرحوم بے مثل شاعر تھے۔ ان کے بے شمار اشعار ادبی دنیا میں یاد گار ہیں۔

"ادبی رسائل و جرائد" میں شائع کیا گیا

معمولی نیکی بھی فائدہ پہنچاسکتی ہے

حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ علیہ بیان کرتے ہیں کہ ایک نیک فطرت شخص نے مصیبت کے وقت ایک بوڑھے شخص کی مدد کی۔ کچھ عرصہ بعد ایسے حالات پیداہوئے کہ اس نوجوان کو کسی جرم میں گرفتار کرلیا گیا اور اس جرم کی سزا موت تھی ۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

غرور کرکے اپنے تمام اعمال برباد کردئیے

حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ علیہ بیان کرتے ہیں کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے زمانے میں ایک سرکش اور فاسق وفاجر شخص مخلوق خدا کیلئے باعث عذاب تھا۔ اس شخص کا تمام وقت لہودلعب میں اور لوگوں کو تنگ کرنے میں گزرتاتھا۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

یہ تو نری تباہی ہے

ایک سادہ لوح شخص علی الصبح حضرت سلیمان علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہوا۔ آپ علیہ السلام نے پوچھا کہ تم اتنے پریشان کیوں ہو؟ اس نے عرض کی کہ حضرت عزرائیل علیہ السلام نے مجھ پر بڑی خوفناک نگاہ ڈالی ہے۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

خوف

(مختصر ترین افسانہ)
اْس کی آنکھیں ایک ہی سمت ٹِک ٹِکی باندھے مسلسل مجھے تکے جارہی تھیں۔۔۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

سخاوت اور کنجوسی کا موازنہ

حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ علیہ بیان کرتے ہیں کہ ایک کنجوس شخص کا بیٹا بے حدسخی تھا۔ اس کنجوس کے مرنے کے بعد اس کی ساری دولت اس سخی بیٹے کے ہاتھ آگئی۔ اس نے اپنی سخاوقت کی بدولت اس دولت کو فقراء ومساکین پر خرچ کرنا شروع کردیا۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

زہر ولی کامل کے لئے تریاق ہے

زہرولی کامل کے لئے تریاق ہے اور اگر کوئی ولی زہر کھالے تو اس پر اس کا کچھ اثر نہیں ہوتا اور اگر یہی زہر کوئی طالب کھالے تو وہ بے ہوش ہوجاتا ہے۔ حضرت سلیمان علیہ السلام دعا کرتے تھے کہ اے اللہ ! میری جیسی سلطنت میرے بعد کسی کو عطا نہ کرنا۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

کتابیں اپنے آباء کی

لندن کی انڈیا آفس لائبریری اور قومی برٹش لائبریری میں اردو کی نہایت پرانی کتابیوں کا ذخیرہ محفوظ ہے۔ برطانوی قانون کے مطابق برصغیر کی کتابوں کے نسخے ان دو کتب خانوں کے لیے بھجوائے جاتے تھے۔ یوں کرتے کرتے وہاں اردو کی 3 ہزار سے زیادہ کتابیں جمع ہو گئیں۔

"مضمون" میں شائع کیا گیا

جون ایلیا۔۔۔

نادرِ روزگار تھے ہم تو: (حصہ سوم)

"مضمون" میں شائع کیا گیا

میاں بیوی

ایک گاؤں میں میاں بیوی رہتے تھے جب ان کے پاس کھانے کو کچھ نہ رہا تو میاں نے اپنی بیوی سے مشورہ کیاکہ اب ہمارا یہاں سے دانہ پانی اٹھ گیا ہے۔ اب ہمیں ایسی جگہ تلاش کرنی چاہیے۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

جس کاکام اسی کو ساجھے

حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ علیہ بیان کرتے ہیں کہ ایک مرتبہ میں بلخ سے بامیان کی جانب جارہاتھا اور راستہ پرخطر تھا۔ میری رہنمائی کے لئے ایک نوجوان میرے ہمراہ ہولیا۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

کامل ہوناا نجام پر نظر رکھنا ہے

ایک فلسفی کاعقیدہ تھا کہ آسمان انڈے کی مانند ہے اور زمین زردی کی مانند ۔ کسی سوال کرنے والے نے پوچھا کہ زمین آسمان کے درمیان کیسے معلق ہے؟ اس فلسفی نے جواب دیاکہ کشش شش جہات کی وجہ سے جس طرح مقناطیس لوہے کے ٹکڑے کو اپنی جانب کھینچتا ہے۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا

جو ہر سونا چاندی ہے

جو کیمیاگری سے یار کوملا

"حکایات" میں شائع کیا گیا

تو ہم پرستی ایک بری لعنت

حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ بیان کرتے ہیں کہ ایک دیہاتی کاگدھا مرگیا۔ اس نے اس کاسرکاٹ کر اپنے انگوروں کے باغ میں لٹکادیا۔

"حکایات" میں شائع کیا گیا