بند کریں
ادب مضامین

مزید عنوان

اردو ادب میں نیا اضافہ

ماؤزے تنگ 1976ء۔1893ء

ماؤزے تنگ نے اشتراکیت پسند جماعت کو چین میں اقتدار لایا اور اگلے ستائیس برس وہ اس بزی قوم کی غیر معمولی اور دوررس تبدیلیوں کا نگران رہا۔

"مضمون" میں شائع کیا گیا

بے نام سی زندگی ۔ حصہ سوم

نہ جانے کہاں چلا گیا ہے؟کوئی فون کال نہیں کوئی میسج نہیں؟آخر وہ گیا کہاں؟ڈرائنگ روم کے دروازے کے پاس کھڑے اشرف صاحب کا غصہ آسماں کی ساتویں حد پار کر گیا تھا۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

بے نام سی زندگی ۔ حصہ دوم

کہاں تھی؟کل رات بھی تم نے بات نہیں کی۔کیوں۔۔۔؟جانتے ہوئے بھی وہ اس سے پوچھ رہا تھا۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

جان ۔ ایف۔ کینیڈی1962ء۔1917ء

جان فٹزگرالڈکینیڈی ” ماسا چوسٹ “ میں بروک لین “ میں 1917ء میں پیدا ہوا ۔ وہ 20جنوری 1961ء سے28 نومبر 1962ء تک امریکہ کا صدر رہا۔ تاآنکہ ٹیکساس میں ڈلاس کے مقام پر اسے قتل کر دیا گیا۔۔۔

"مضمون" میں شائع کیا گیا

زندہ درگور بیٹیاں

کالج دور میں کتب بینی کا بہت شوق تھا جو کہ اسی دور کے ساتھ تقریباً ختم ہو گیا تھا،نوے کی دہائی تھی پی ٹی وی کا سنہری دور ابھی چل رہا تھا اور تقسیم ہند کی کہانیاں ٹیلیویژن اور کتب کے ذریعے تواتر سے سامنے آتی رہتی تھیں۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

بے نام سی زندگی ۔ حصہ اول

کمرے میں ہر سو اندھیرا تھا۔اس نے آنکھیں کھولنے کی پوری کوشش کی لیکن ناکام رہا ۔ایسا لگ رہا تھا جیسے وہ کسی کوٹھری میں ہو۔وہ اپنے آپکو کسی گہری گھائی میں جاتا محسوس کر رہا تھا۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

دوستی

یہ حیثیت تھی میری،میری دوستوں میں۔جو آج ہوا کیا یہ سب میری دوستوں کو کرنا چاہیے تھا؟میرا نہیں تو کم از کم دوستی کا ہی کچھ لحاظ کر لیتیں ۔کیا بگاڑا تھا میں نے ان کا۔۔۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

گوتم بدھ483ء تا563قبل مسیح

گوتم کااصل نام شہزادہ سدھارتھ تھا ‘ وہ بدھ مت کابانی ہے ، جو دنیائے عظیم مذاہب میں سے ایک ہے ۔ سدھارتھ کپل وستو کے راجہ کا بیٹا تھا ‘ جو نیپال کی سرحدوں کے نزدیک شمالی ہندوستان کا ایک شہر ہے۔

"مضمون" میں شائع کیا گیا

کرسٹو فرکولمبس1506ء۔1451ء

کولمبس نے پورپ سے مشرق کی طرف بحری راستہ کھو جتے ہوئے ‘ بے دھیانی سمت ہی امریکہ کو دریافت کرلیا۔ اس دریافت نے اس کے اپنے اندازوں کی نسبت کہیں زیادہ سدت سے تاریخ عالم پر اپنے اثرات چھوڑے۔۔۔

"مضمون" میں شائع کیا گیا

پچھتاوا

دسمبر چل رہا تھا، سردی کا کہنا تھا کہ میں اگر آج اپنا کمال نہ دِکھا پائی تو کبھی نہیں دِکھا پاؤں گی۔ میں اپنے کمرے میں اپنے آپ کو قہر کی سردی سے بچانے کیلئے ،اپنے گھر کے اُس کمرے میں ہیٹر جلائے ہوئے کچھ پڑھ رہا تھاجس کا دروازہ باہر گلی میں کُھلتا تھا

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

محمود ساجد کے شعری مجموعے کی تقریبِ رونمائی وپذیرائی

تقریب کی نظامت شاہجہان سالف نے کی

"ادبی خبریں" میں شائع کیا گیا

قائداعظم لائبریری

کُتب بینی کا بڑا ذریعہ
منٹگمری ہال وسعت میں لارنس ہال سے بڑا ہے اسکی تعمیر 66لاکھ میں عمل میں آئی

"مضمون" میں شائع کیا گیا

شہزادہ الولیدبن طلال

انہوں نے اپنی ساری دولت خدمت انسانی کیلئے وقف کر دی۔

"مضمون" میں شائع کیا گیا

آرزو تھی اُسے پانے کی ۔ حصہ دوم

پپا مجھے نہیں کرنی شادی آپ مما کو سمجھاتے کیوں نہیں؟دیکھیں نا کیا کررہی ہیں۔ارحم جھنجھلا گیا میں نے نبیلہ با جی کو زبان دے دی ہے۔اب زیادہ بحث مت کرو ۔کل وہ آئیں گئی تو ہم سب مل لیں گے۔۔۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

آرزو تھی اُسے پانے کی ۔ حصہ اول

کیا تکلیف ہے؟شرم تو تمھیں با لکل نہیں آتی کب سے کالز کر رہا ہوں۔مجال ہے جو تمھیں کوئی اثر ہو۔۔۔دفعہ ہو جاؤ۔وہ اسکے کال اٹھاتے ہی شروع ہو چکا تھا۔۔۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

اِک ستم اورمیری جاں

کہتے ہیں کہ خوشحال وہ نہیں ہوتا۔جس کے پاس پیسہ ہوتا ہے۔بلکہ خوشحال وہ ہوتا ہے جو اپنے حال پر خوش ہوتا ہے اور وہ بھی ان خوش قسمت لوگوں میں سے تھی۔۔۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

پتھر کی عورت۔۔!

اللہ کی زمین بہت بڑی ہے۔ ! یہ مجھے بہت بعد میں پتہ چلا ، اتنا بعد میں کہ نہ میں واپس جا سکتی ہوں نہ میں آگے جانے پر قدرت رکھتی ہوں۔۔۔

"افسانہ" میں شائع کیا گیا

حلقہ ارباب زوق سرگودھا کا قیام

4اگست بروز منگل مائی کلیکشن بک شاپ میں حلقہ ارباب ذوق سرگودھا کی بنیاد ایک غیر رسمی نشست میں رکھی گئی۔

"ادبی خبریں" میں شائع کیا گیا

مانی 276ء ۔ 216ء

تیسری صدی عیسوی کا پیغمبر مانی ” مانی مت “ کا بانی تھا ۔ آج یہ مذہب باقی نہیں رہا ‘ لیکن اپنے عروج کے زمانے میں اس کے پیروکاروں کی تعداد بہت زیادہ تھی ۔

"مضمون" میں شائع کیا گیا

حضرت بابا فرید گنج شکر رحمتہ اللہ علیہ

تسخیر قلوب کے اس روحانی عمل میں جو صوفی شعرائے عظام سامنے آئے ان میں پہلا نام حضرت بابا فرید گنج شکر رحمتہ اللہ علیہ کا ہے۔ آپ ایک تاریخی حوالے کے مطابق 1175ء میں کھتوال میں پیدا ہوئے اور 1265ء میں دنیا سے پردہ فرمایا۔۔۔

"مضمون" میں شائع کیا گیا