Khudi K Zuaam Main Aaisa Wo Mubtala Hua Hai

خودی کے زعم میں ایسا وہ مبتلا ہوا ہے

خودی کے زعم میں ایسا وہ مبتلا ہوا ہے

جو آدمی بھی نہیں تھا وہ اب خدا ہوا ہے

وہ کہہ رہا تھا بجھائے گا پیاس صحرا کی

مرا اک ابر کے ٹکڑے سے رابطہ ہوا ہے

تمہارا طرز بیاں خوب ہے مگر صاحب

یہ قصہ میں نے ذرا مختلف سنا ہوا ہے

یہ مٹی پاؤں مرے چھوڑتی نہیں ورنہ

فلک کا راستہ بھی سامنے پڑا ہوا ہے

اسی کے ہاتھ پہ بیعت میں کر کے آیا ہوں

جو بوڑھا پیڑ کڑی دھوپ میں کھڑا ہوا ہے

خراج مانگتا ہے مجھ سے یہ بدن میرا

کہ لوح دل پہ ترا نام بھی لکھا ہوا ہے

وہ مجھ کو دیکھ کے رستہ بدل گیا ارشدؔ

ذرا سی دیر میں اس کو یہ جانے کیا ہوا ہے

ارشد محمود ارشد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(550) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arshad Mahmood Arshad, Khudi K Zuaam Main Aaisa Wo Mubtala Hua Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arshad Mahmood Arshad.