Is Gali Ke Logon Ko Mun Laga Ke Pachtaye, Urdu Ghazal By Habib Jalib

Is Gali Ke Logon Ko Mun Laga Ke Pachtaye is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Habib Jalib. Is Gali Ke Logon Ko Mun Laga Ke Pachtaye comes under the Sad, Social category of Urdu Ghazal. You can read Is Gali Ke Logon Ko Mun Laga Ke Pachtaye on this page of UrduPoint.

اس گلی کے لوگوں کو منہ لگا کے پچھتائے

حبیب جالب

اس گلی کے لوگوں کو منہ لگا کے پچھتائے

ایک درد کی خاطر کتنے درد اپنائے

تھک کے سو گیا سورج شام کے دھندلکوں میں

آج بھی کئی غنچے پھول بن کے مرجھائے

ہم ہنسے تو آنکھوں میں تیرنے لگی شبنم

تم ہنسے تو گلشن نے تم پہ پھول برسائے

اس گلی میں کیا کھویا اس گلی میں کیا پایا

تشنہ کام پہنچے تھے تشنہ کام لوٹ آئے

پھر رہی ہیں آنکھوں میں تیرے شہر کی گلیاں

ڈوبتا ہوا سورج پھیلتے ہوئے سائے

جالبؔ ایک آوارہ الجھنوں کا گہوارہ

کون اس کو سمجھائے کون اس کو سلجھائے

حبیب جالب

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3933) ووٹ وصول ہوئے

You can read Is Gali Ke Logon Ko Mun Laga Ke Pachtaye written by Habib Jalib at UrduPoint. Is Gali Ke Logon Ko Mun Laga Ke Pachtaye is one of the masterpieces written by Habib Jalib. You can also find the complete poetry collection of Habib Jalib by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Habib Jalib' above.

Is Gali Ke Logon Ko Mun Laga Ke Pachtaye is a widely read Urdu Ghazal. If you like Is Gali Ke Logon Ko Mun Laga Ke Pachtaye, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Sad Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.