Nah Kam Howa Hai Nah Ho Soaz Iztiraab Daroon

نہ کم ہوا ہے نہ ہو سوز اضطراب دروں

نہ کم ہوا ہے نہ ہو سوز اضطراب دروں

ترے قریب رہوں میں کہ تجھ سے دور رہوں

کہیں کوئی ترا محرم ہے اے دل محزوں

مجھے بتا کہ کدھر جاؤں کس سے بات کروں

تری نظر نے بہت کچھ سکھا دیا دل کو

کچھ اتنا سہل نہ تھا ورنہ کاروبار جنوں

پکارتی ہیں مجھے وسعتیں دو عالم کی

میں اپنے آپ سے دامن چھڑا سکوں تو چلوں

تری وفا نہ مجھے راس آ سکی لیکن

میں سوچتا ہوں تجھے کیسے بے وفا کہہ دوں

مری شکستہ دلی کا نہ کر خیال اتنا

کہیں نہ میں ترے خوابوں میں تلخیاں بھر دوں

گرفت عصر رواں اس قدر تو مہلت دے

کہ مٹ رہی ہے جو دنیا اسے میں دیکھ تو لوں

یہ کس خیال نے کی ہے مری زباں بندی

تجھی سے کہنے کی باتیں تجھی سے کہہ نہ سکوں

وہ اضطراب طلب تھا کسی توقع پر

اب اٹھ چکی ہے توقع اب آ چلا ہے سکوں

مخمور سعیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(672) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Makhmoor Saeedi, Nah Kam Howa Hai Nah Ho Soaz Iztiraab Daroon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Makhmoor Saeedi.