Jab Khizan Ata Hai Tu Har Shay Ka Libas Badal Jata Hai

جب خزاں آتا ہے ہر شے کا لباس بدل جاتا ہے

جب خزاں آتا ہے ہر شے کا لباس بدل جاتا ہے

موسم بدل جاتا ہے تو رنگ آکاش بدل جاتا ہے

کبھی صنم خانے بدل گئے، کبھی صنم تراش بدل جاتا ہے

کبھی با زی پلٹ گئی کبھی وہ پتہٴ تاش بدل جاتا ہے

مجھے میری وفاداری کے بدلے وفا نہیں جفا چاہیے

میرے دل کو تری مترنم نوا، نہیں تری پُرکشش ادا چاہیے

غم کے سبھی رنگوں سے رنگیں ہے مری حیات

تو میرا چہرہ پڑھ لے، نہ پوچھ مجھ سے کوئی بات

اس چمن سے امید رکھی ،خشک ہیں جس کے گل و پات

مجبور نہ کر کھل جائیں گے مرے دل سے یہ اقتباسات

دیکھ میرے دل کی فطرت کتنی چالاک ہے

میرے پردہٴ ہائے د ماغ مانند افلاک ہے

نہ مجبور کر سکی ان کو کپڑے کی ارزانی

آہ کہ یہ کیا ہیں گل ہائے جدید زمانی

تہذیب جدید کی گستری ہے یہ گل افشانی

یہ لباس نسواں ہے یا کوئی مچھر دانی

اہل مغرب نے یہ زہر مغلوف تہذیب کر رکھا ہے

واللہ یہ تہذیب نہیں ، یہ ہے قرب قیامت کی نشانی!

سردار زبیر احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(249) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Sardar Zubair Ahmed, Jab Khizan Ata Hai Tu Har Shay Ka Libas Badal Jata Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 30 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Sardar Zubair Ahmed.