Meri Dastan Chehrey Pey Nahi Mere Rooh Main Hai Poshida

مری داستاں چہرے پہ نہیں مری روح میں ہے پوشیدہ

مری داستاں چہرے پہ نہیں مری روح میں ہے پوشیدہ

نجانے کیوں تڑپا رہا ہے مجھے وہ غم نادیدہ

بہار میں بھی لگتا ہے مجھے یہ شجر خزاں رسیدہ

مری آنکھیں تو خزاں میں بھی نہیں ہوتی ہیں بریدہ

صبح کو بھی لکھا ہے مسا کو بھی لکھا ہے ترا قصیدہ

میں اسے سناوٴں گا کیسے جسے لکھ کر ہو گیا آبدیدہ

لکھنا بھی پڑے گا ، سنانا بھی پڑے گا سہنا بھی پڑے گا

زبیر اہل عشق کے دستور ہوتے ہیں بڑے پیچیدہ!

سردار زبیر احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(407) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Sardar Zubair Ahmed, Meri Dastan Chehrey Pey Nahi Mere Rooh Main Hai Poshida in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Qataat, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 30 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Sardar Zubair Ahmed.