بند کریں
ادب حکایاترابعہ بصریہ

مزید حکایات

- مزید مضامین

مزید عنوان

رابعہ بصریہ
حضرت شاہ غوث علی علیہ الرحمة تذکرہ غوثیہ میں لکھتے ہیں کہ حضرت رابعہ بصریہ رحمتہ اللہ علیہا کو کسی شخص نے رنڈی کے ہاتھ فروخت کردیا چونکہ آپ
حکایت خواتین :
حضرت شاہ غوث علی علیہ الرحمة تذکرہ غوثیہ میں لکھتے ہیں کہ حضرت رابعہ بصریہ رحمتہ اللہ علیہا کو کسی شخص نے رنڈی کے ہاتھ فروخت کردیا چونکہ آپ بڑی حسینہ وجمیلہ تھیں رنڈی نے انہیں زیورو لباس سے آراستہ کرکے بالا خانہ پر بٹھا دیا۔ مشتاقوں کا ہجوم ہونے لگا مگر بوقت شب جو شخص رنڈی کی اجازت سے اندر آتا۔ آپ اسے کہتیں کہ اول وضو کرکے دورکعت نفل پڑھ لے ۔ وہ وضو کرکے نفل پڑھتا تو آپ اپنی ہمت باطنی سے اس کی طرف توجہ دیتیں تو وہ کانپنے لگتا اور آپ کے ہاتھ پر توبہ کرکے نکل جاتا ۔ سال بھر تک ایسا ہی ہوتا رہا اور سینکڑوں بدمعاش نیک اور پارسابن گئے ۔ رنڈی نے خیال کیا کہ یہ کیا بات ہے جو شخص ایک بار آتا ہے پھر آنے کا نام تک نہیں لیتا حالانکہ اس کے حسن وجمال میں کوئی کسر نہیں ۔ ایک رات اس سے چھپ کردیکھا اوران کا معاملہ دیکھ کر صبح حضرت رابعہ بصریہ رحمتہ اللہ علیہا کے قدموں میں گر پڑی اور کہنے لگی میرا قصور معاف کرو۔ مجھ کو آپ کی شان کا پتہ نہ تھا۔ میں نے آپ کو آزاد کیا ۔ آپ نے فرمایا ۔ اری احمق تم نے مجھے آزاد کیا کیا۔ یہ فیض جو جاری تھا اسے برباد کیا ۔

(0) ووٹ وصول ہوئے