KhwaboN Kay Sanam Khanay Jab Dhaey Gaey HuN Ge

خوابوں کے صنم خانے جب ڈھائے گئے ہوں گے

خوابوں کے صنم خانے جب ڈھائے گئے ہوں گے

اس دور کے سب آزر بلوائے گئے ہوں گے

تو بھی نہ بچی ہوگی اے عافیت اندیشی

ہر سمت سے جب پتھر برسائے گئے ہوں گے

پھر اس نے مسائل کا حل ڈھونڈ لیا ہوگا

پھر لوگ مسائل میں الجھائے گئے ہوں گے

ہم گزرے کہ تم گزرے یہ دیکھنے کون آتا

تھے جتنے تماشائی سب لائے گئے ہوں گے

یاران قدح سے کچھ لغزش بھی ہوئی ہوگی

دانستہ بھی کچھ ساغر چھلکائے گئے ہوں گے

افضلؔ کا مقدر ہے حق گوئی و رسوائی

سچ بات کہی ہوگی جھٹلائے گئے ہوں گے

اعزاز افضل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(505) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ezaz Afzal, KhwaboN Kay Sanam Khanay Jab Dhaey Gaey HuN Ge in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 20 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ezaz Afzal.