DiloN Kay Beech Badan Ki Faseel OTha Di Jaey

دلوں کے بیچ بدن کی فصیل اٹھا دی جائے

دلوں کے بیچ بدن کی فصیل اٹھا دی جائے

سمٹ رہی ہے مسافت ذرا بڑھا دی جائے

ہماری سمت کبھی زحمت سفر تو کرو

تمہاری راہ میں بھی کہکشاں بچھا دی جائے

بنی تو ہوگی کہیں سرحد گراں گوشی

تمہیں بتاؤ کہاں سے تمہیں صدا دی جائے

کسی کے کام تو آئے خلوص کی خوشبو

مزاج میں نہ سہی جسم میں بسا دی جائے

یہ سوچتے نہیں کیوں فاصلے طویل ہوئے

یہ پوچھتے ہیں کہ رفتار کیوں بڑھا دی جائے

یہ محویت نہ کہیں تجھ سے پھیر دے سب کو

تری طرف سے توجہ ذرا ہٹا دی جائے

تکلفات کی پر پیچ وادیاں کب تک

بہ راہ راست انہیں دعوت وفا دی جائے

سنی ہیں ہم نے بہت تیرگی پہ تقریریں

ملے نہ لفظ اگر روشنی بجھا دی جائے

گزرنے والی ہوا خود پتہ لگا لے گی

ذرا سی آگ کسی راکھ میں دبا دی جائے

اعزاز افضل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(425) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ezaz Afzal, DiloN Kay Beech Badan Ki Faseel OTha Di Jaey in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 20 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ezaz Afzal.