Raigani Se Bharpur Kaise Musafat Ka Aghaz Hai

رائیگانی سے بھرپور کیسی مسافت کا آغاز ہے

رائیگانی سے بھرپور کیسی مسافت کا آغاز ہے

جسکا انجام پہلے سے معلوم ہے

ہم جو دوراہے پر آکھڑے ہوتے ہیں

دو قدم کی مسافت کا سودوزیاں سوچنے لگتے ہیں

ایسا کیسے چلے اور کب تک چلے گا

مرے ہمرہی

جس سفر کی نہایت شمارِ خسارہ کا امکان ہو،

اس سفر کا مجوز

وہ امکان ہے

دیکھ! امکان کی وسعتوں میں چھپا ہے وہ خوابیدہ پل

جس میں ترشے تراشے ہوئے سارے اندیشے، اوہامِ سودوزیاں توڑ دیں کیلکولیٹر

بنائیں کوئی ایسا میزان جو معتدل راستوں کی بناء ڈال دے

سود میں کچھ زیاں کی ملاوٹ کرے

اور خسارے میں ڈھونڈے منافع کوئ

ایسے مضموم سودے کی چھانٹی بھلا کوئی آسان ہے ؟

عین ممکن شمارِ خسارہ کا امکان موہوم سا

منفعت بخش ہو، ایک امکان ہے

یہ سفر جس کے آغاز میں اس کا انجام لکھا ہے دیوار پر

کیا کریں ہم سفر؟

فاخرہ نورین

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(429) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fakhra Noreen, Raigani Se Bharpur Kaise Musafat Ka Aghaz Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fakhra Noreen.