Meri Qismat Main Kiya Likha Giya Hai

مری قسمت میں کیا لکھا گیا ہے

مری قسمت میں کیا لکھا گیا ہے

مرے بارے میں کیا سوچا گیا ہے

مجھے اس خواب کی بابت بتاو

گزشتہ رات جو دیکھا گیا ہے

یہ نکتہ میں سمجھ پایا نہیں ہوں

زمیں پر کیوں مجھےبھیجا گیا ہے

یہ مٹی مٹی کی دشمن ہوئی ہے

جو خاکی خاک پر گھبرا گیا ہے

عدو پھر سر اٹھانے لگ گئے ہیں

ستارہ گردشوں میں آ گیا ہے

جو ناری ہے بشر کا ازلی دشمن

وہ روز حشر تک چھوڑا گیا ہے

فرشتے چیخ کر یہ کہہ رہے ہیں

ترا نالہ فلک تک آ گیا ہے

ازل سے تھی ابد تک کی کہانی

جو ماجد شعر میں کہتا گیا ہے

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(410) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Meri Qismat Main Kiya Likha Giya Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.