Labon Pay Hai Jo Tabasum To Aankh Par Num Hai

لبوں پہ ہے جو تبسم تو آنکھ پر نم ہے

لبوں پہ ہے جو تبسم تو آنکھ پر نم ہے

شعور غم کا یہ عالم عجیب عالم ہے

گزر نہ جادۂ امکاں سے بے خیالی میں

یہیں کہیں تری جنت یہیں جہنم ہے

بھٹک رہا ہے دل امروز کے اندھیروں میں

نشان منزل فردا بہت ہی مبہم ہے

بڑھا دیا ہے اسیروں کی خستہ حالی نے

قفس سے تا بہ چمن ورنہ فاصلہ کم ہے

ابھی نہیں کسی عالم میں دل ٹھہرنے کا

ابھی نظر میں تری انجمن کا عالم ہے

کہاں یہ زندگی ہرزہ گرد لے آئی

نہ رہ گزار طرب ہے نہ جادۂ غم ہے

کچھ ایسے ہم نے ترے غم کی پرورش کی ہے

کہ جیسے مقصد ہستی فقط ترا غم ہے

مخمور سعیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(771) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Makhmoor Saeedi, Labon Pay Hai Jo Tabasum To Aankh Par Num Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Makhmoor Saeedi.