Bhega Hua Hai Anchaal Ankhoon Main Bhi Nami Hai

بھیگا ہوا ہے آنچل آنکھوں میں بھی نمی ہے

بھیگا ہوا ہے آنچل آنکھوں میں بھی نمی ہے

پھیلا ہوا ہے کاجل آنکھوں میں بھی نمی ہے

برسے گا آج کھل کر بے چین و مضطرب ہوں

چھایا ہے غم کا بادل آنکھوں میں بھی نمی ہے

کیسی عجیب حالت طاری ہوئی ہے دل پر

ہوں منتظر مسلسل آنکھوں میں بھی نمی ہے

مدت کے بعد آیا دنیائے دل میں کوئی

صحرا ہوا ہے جل تھل آنکھوں میں بھی نمی ہے

یہ خود سپردگی کا ہے اک عجیب عالم

خوابوں کا جیسے جنگل آنکھوں میں بھی نمی ہے

محسوس ہو رہا ہے اک جال میں ہوں کب سے

یہ عشق ہے کہ دلدل آنکھوں میں بھی نمی ہے

اک حرف حق کے بدلے چڑھتے ہیں کتنے سولی

شہر وفا ہے مقتل آنکھوں میں بھی نمی ہے

اک دن سخن کی ملکہ بن جاؤ گی سبیلہؔ

پھر آج کیوں ہو بے کل آنکھوں میں بھی نمی ہے

سبیلہ انعام صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(542) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Sabeela Inam Siddiqui, Bhega Hua Hai Anchaal Ankhoon Main Bhi Nami Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Sabeela Inam Siddiqui.