Ik Tanha Be Barg Shajar

اک تنہا بے برگ شجر

کون مجھے دکھ دے سکتا ہے

دکھ تو میرے اندر کی کشت ویراں کا

اک تنا بے برگ شجر ہے

رت کی نازک لانبی پوریں

کرنیں خوشبو چاپ ہوائیں

جسموں پر جب رینگنے پھرنے لگتی ہیں

میرے اندر دکھ کا سویا پیڑ بھی جاگ اٹھتا ہے

تنگ مساموں کے غرفوں سے

لمبی نازک شاخیں پھن پھیلا کر

تن کی اندھی شریانوں میں قدم قدم چلنے لگتی ہیں

شریانوں سے رگوں رگوں سے نسوں کے اندر تک

جانے لگتی ہیں

پھر وہ گرم لہو میں مل کر

اک اک بال کی جڑ تک پھیلتی جاتی ہیں

اور یہ میرا صدیوں پرانا مسکن خاکی مسکن

خود بھی ایک شجر بن جاتا ہے

وقت کی قطرہ قطرہ ٹپکتی

سرخ زباں کی نوک پہ آ کر

جم جاتا ہے

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(681) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Ik Tanha Be Barg Shajar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.