Teen Ka Dabba

ٹین کا ڈبہ

سمندر کے بوسوں سے ہاری ہوئی ریت

ریت پر ٹوٹی پھوٹی پرانی سیہ رنگ چیزوں کے انبار میں

ایک پچکا ہوا ٹین کا زرد ڈبہ

سیاہی کے برہم سمندر نے جس کو اچھالا

سیاہی کے بے نام ساحل نے جس کو سنبھالا

اندھیرے میں بکھرے ہوئے مردہ لمحوں کے اک ڈھیر میں

پا شکستہ سی اک ساعت نیم جاں

کالے قرنوں کے سفر مسلسل کی اک داستاں

کالے قرنوں کی وہ داستاں

تیرگی کی چٹانوں سے ٹکرائی

ٹکرا کے روشن ہوئی

گھپ اندھیرے میں ابھریں لکیریں

لکیروں سے بنتی گئیں صورتیں

پیڑ بادل مکاں ایک روشن ندی

اور روشن ندی کے کنارے چمکتی ہوئی گھاس پر

دودھیا اون کی دھجیاں

روشنی کا ابھرتا ہوا اک جہاں

تیرگی اب کہاں ہے

تڑپتی ہوئی ریت پر ہر طرف

شوخ کرنوں کا ایک جال سا تن گیا ہے

چمکتا ہوا ٹین کا زرد ڈبہ

شعاعوں کا لاوا اگلنے لگا ہے

ابلتے ہوئے روشنی کے سمندر میں ڈھل کر

زمیں سے فلک تک اچھلنے لگا ہے

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(437) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Teen Ka Dabba in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.