Fizaon Main Kuch Aasie Khalbali Thi

فضاؤں میں کچھ ایسی کھلبلی تھی

فضاؤں میں کچھ ایسی کھلبلی تھی

کلیجہ تھام کر وحشت چلی تھی

کبھی اس کی جوانی منچلی تھی

کبھی دنیا بھی سانچے میں ڈھلی تھی

یہی آئینہ در آئینہ الفت

کبھی عکس‌ خفی نقش جلی تھی

نہ چھوڑا سرد جھونکوں نے وفا کو

جو شاخ درد کی تنہا کلی تھی

بگاڑا کس نے ہے طبع جہال کو

کبھی یہ رند مشرب بھی ولی تھی

محیط ہنگامۂ آفاق پر ہے

صدائے درد جو دل میں پلی تھی

غنیمت جانئے پھر نیم روشن

چراغ راہ سے اپنی گلی تھی

برا ہو آگہی کا زیست ورنہ

گزر جاتی بری تھی یا بھلی تھی

ہمیں نے فوقؔ چاہا زندگی کو

ہمیں سے کشت غم پھولی پھلی تھی

حنیف فوق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(617) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hanif Fouq, Fizaon Main Kuch Aasie Khalbali Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hanif Fouq.