مشہور شاعر منظور ہاشمی کی شاعری ۔ نظمیں اور غزلیں

کچھ خیال دل ناشاد تو کر لینا تھا

منظور ہاشمی

راستہ سمندر کا جب رکا ہوا پایا

منظور ہاشمی

خیال و شوق کو جب ہم تری تصویر کرتے ہیں

منظور ہاشمی

طلسم کوہ ندا جب بھی ٹوٹ جائے گا

منظور ہاشمی

کسی بہانے سہی دل لہو تو ہونا ہے

منظور ہاشمی

نہ سنتی ہے نہ کہنا چاہتی ہے

منظور ہاشمی

وفور شوق میں جب بھی کلام کرتے ہیں

منظور ہاشمی

فوج کی آخری صف ہو جاؤں

منظور ہاشمی

شوق جب جرأت اظہار سے ڈر جائے گا

منظور ہاشمی

رسم ہی نیند کی آنکھوں سے اٹھا دی گئی کیا

منظور ہاشمی

جو کھلی چمن میں نئی کلی تو وہ جشن صوت و صدا ہوا

منظور ہاشمی

سر پر تھی کڑی دھوپ بس اتنا ہی نہیں تھا

منظور ہاشمی

بدن کو زخم کریں خاک کو لبادہ کریں

منظور ہاشمی

لٹا دئیے تھے کبھی جو خزانے ڈھونڈھتے ہیں

منظور ہاشمی

کوئی پوچھے تو نہ کہنا کہ ابھی زندہ ہوں

منظور ہاشمی

نہیں تھا کوئی ستارا ترے برابر بھی

منظور ہاشمی

یقین ہو تو کوئی راستہ نکلتا ہے

منظور ہاشمی

نئی زمیں نہ کوئی آسمان مانگتے ہیں

منظور ہاشمی