بند کریں
شاعری مضامینانتخاب سر گودھا سے تعلق رکھنے والے خوبصورت شاعر فیضان ہاشمی کی شاعری سے انتخاب ۔۔۔۔۔۔۔۔ نصراللہ حارث

انتخاب کے مزید مضامین

پچھلے مضامین -
سر گودھا سے تعلق رکھنے والے خوبصورت شاعر فیضان ہاشمی کی شاعری سے انتخاب ۔۔۔۔۔۔۔۔ نصراللہ حارث
میرے سینیر دوست، بڑے بھائی فیضان ہاشمی کی چند غزلوں میں سے انتخاب احباب کی نذر۔ انتخاب کی طوالت کے لیے معذرت۔ ایک سے ایک اچھا شعر تھا تمام غزلوں میں تو انتخاب کافی مشکل تھا۔

میرے سینیر دوست، بڑے بھائی فیضان ہاشمی کی چند غزلوں میں سے انتخاب احباب کی نذر۔ انتخاب کی طوالت کے لیے معذرت۔ ایک سے ایک اچھا شعر تھا تمام غزلوں میں تو انتخاب کافی مشکل تھا۔

کچھ چائے میں چینی کم تھی
کچھ میں اندر سے کڑوا تھا
۔۔۔۔۔۔۔
شام کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر بیٹھا ہوں میں
بُن رہا ہے وقت کوئی حادثہ میرے خلاف
۔۔۔۔۔۔۔
بہت شدید توجہ کا سامنا تھا مجھے
سو اک گلاس کو پانی سے بھر لیا میں نے
ہوا میں ہاتھ گمایا غزل نہیں آئی
اچک کے پھول ہی کاغذ پہ دھر لیا میں نے
۔۔۔۔۔۔۔۔
دل میں اک باغ ہے پر باغ سے باہر وہ حسیں
سیر کرنے کو بہت دور نکل جا تا ہے
نیند اک دوسری دنیا میں جگاتی ہے مجھے
ہر الارَم پہ میرا خواب بدل جاتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔
میں جب زمین سے زہرہ پہ جایا کرتا تھا
تو کائنات کی زنجیر کھینچی جاتی تھی
میں اس کو خواب میں کچھ ایسے دیکھا کرتا تھا
تمام رات وہ سوتے میں مسکراتی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔
خزاں نے اپنا خزانہ لٹایا ہے مجھ پر
یہ زرد دل ترے رنگوں سے قیمتی ہے بہت
بھرا ہوا ہے کسی کی کمی سے موٹر وے
وطن سے واپسی پہ دُھند پڑ رہی ہے بہت
۔۔۔۔۔۔۔۔
کسی سے ایک کرو گے تو دوسری ہو گی
جو کر رہے ہو محبت تو خرچ بھی ہو گی
مرے فلیٹ, جو آتی ہے گھومتی سیڑھی
وہ ایک چاند کے دل میں اتر رہی ہوگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترا خیال مرے دل کے ساتھ کیا ڈوبا
پھر اُس کے بعد کسی سطح پر نہیں آیا
یہ ٹی سی ایس ہی کیا ہے کسی نے میرے لیئے
یہ پھول خواب سے بہہ کر ادھر نہیں آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملا رہا ہوں تیرا حُسن کائنات کے ساتھ
فیزکس کھول کے بیٹھا ہوں دینیات کے ساتھ
یہ پوسٹر تو بھلا ہے مگر پڑھے لکھو !!
زرا سا دل بھی تو رکھو قلم دوات کے ساتھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت سے دیدہ و نادیدہ خواب سامنے تھے
اک ایسی سمت تھی کروٹ مرے سرہانے کی
میں اس جگہ پہ جو اک دن پلٹ کے آیا تو
کوئی بھی چیز نہیں تھی مرے زمانے کی
تمام شہر میں پوری طرح خموشی تھی
مجھے پڑی تھی کوئی گیت گنگنانے کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں بنا رہ جاؤں گا پتھر کا تیرے باغ میں
اور ترا چہرہ مرے رخ پر تراشا جائے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ڈی زائن بہت اچھا ہے مگر میرے خدا
اک ستارے کو مجھے تھوڑا ادھر کرنا ہے
میرے دریا مجھے رہنا ہے اسی ایک طرف
اور تجھے دونوں کناروں پہ سفر کرنا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسا اک وقت مری آنکھ نے ایجاد کیا
جس کے دوران کوئی وقت نہیں آ سکتا
اسکو تو روک نہیں سکتا مگر سوچتا ہوں
میں سٹیشن پہ کھڑی ریل ہی رکوا سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنکھوں کے سوکھنے پہ بھی۔۔۔۔۔ پورا نشان رہ گیا
جیسے نمک کی کان میں لاشے مرے پڑے رہے
سرخ سیاہ اور سفید ۔۔۔۔ فرش پہ فاش سارے بھید
ایک دو خانے چھوڑ کر عرش کے در کھلے رہے
شیش محل نہ گن سکا۔۔۔۔۔۔ سارے کبوتروں کے پر
دور چبوترے سے جو...... شاہ جمال کے رہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ سے کوئی مجھ میں ہی اترے چلا آتا ہے کیا
کیسے روشن ہو گئیں اندر کو آتی سیڑھیاں
۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی کبھار کسی کہکشاں کی گردشِ حال
مراقبے میں مجھے ساتھ ساتھ دیکھتی ہے
اسی سرائے میں ٹھہرو کہ ایک رقاصہ
یہاں پہ قا فلے والوں کے ہاتھ دیکھتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مٹی کی خوبصورتی ......مٹی میں مِل کے دیکھیے
چھوڑیے اُس مکین کو کیجیے اپنے گھر کی سیر
تیری ہی سیر کے لیے... آتا رہوں گا بار بار ؟
تیرا تھا سات دن کا شوق, میری ہے عمر بھر کی سیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا پتہ آپ کے ہی چہرے سے
اک نیا لمس ہاتھ آجائے
کیا پتہ خواہشیں نہ پوری ہوں
جن نکلتے ہی ہم کو کھا جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے خلا میں لا کے یہ تم کو دکھا رہا ہوں میں
وہ جو خلا نورد ہیں انکے لیے خلا ہوں میں
عشق ہوا نہیں مجھے ..عشق کو ہو گیا ہوں میں
اتنا نہیں بچا ہوا..... جتنا پڑا ہوا ہوں میں
مٹی یہاں کی ٹھیک ہے مٹی سے کچھ گلا نہیں
آنکھیں ملا ملا کہ بس پانی بدل رہا ہوں میں
روح ملی ہے یا نہیں اتنا میں جانتا نہیں
تیرے سے ایک جسم کو پہلے بھی مل چکا ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک میں ہوں اور کچھ پانی میں جمتی کائی ہے
جھیل ہے اور جھیل کے دونوں طرف گہرائی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سامنے ہوتے تھے پہلے جس قدر ہوتے تھے ہم
جب یہ نظارے نہیں تھے تب نظر ہوتے تھے ہم
تب نیا مٹی سے اٹھا تھا محبت کا خمیر
ہر کسی کوزے میں دو اک گھونٹ بھر ہوتے تھے ہم
سامنے آتے تھے جب تو ڈھونڈتے تھے کشتیاں
چار آنکھوں سے بنی اک جھیل پر ہوتے تھے ہم
اک گھڑی ایسی بھی آتی تھی ملاقاتوں کے بیچ
تم اُدھر ہوتے تھے جسکے اور ادھر ہوتے تھے ہم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹوپی سے نکلا خرگوش
جادو گر کی زات کھلی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نے کیمسٹری نہیں سیکھی
مے کدے میں پڑھائی جاتی ہے
کوزے تو دیکھتا ہوں بنتے ہوئے
مٹی کیسے بنائی جاتی ہے
ایسی بارش میں میری گاڑی کو
اک سڑک ہے جو لینے آتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھول تو پھول میں پتی بھی نہیں توڑوں گا
تجھ سے ثابت ہی نہ ہوگا مرا ہونا اس میں
تو نے دو شخص اتارے تھے یہ میں جانتا ہوں
میں نے بھی شعر کہے ہیں بہت اعلٰی اس میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب نہ بتا کہ چاک کی حد سے نکل گیا ہے تو
میں نے تجھے بنایا تھا تجھکو تری دکھا کے حد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جلدی پانی لے کر آو
چڑیا مرنے والی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
موت اک اسپیس شپ ہے جس کے اندر بیٹھ کر
اپنی جنت اپنی دوزخ کی طرف جاتے ہیں سب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب تو لاشیں پھرتی ہیں بازاروں میں
پہلے قبرستان بنائے جاتے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جانے کس کہکشاں کی آمد ہے
دل نے خالی کرا لیا ہے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چار چھ روز کہکشاں میں رہا
پھر ستارہ مری اماں میں رہا
ہر کوئی بھیگتا رہا اور میں
ایک بادل کے سائباں میں رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ آئے نہیں ہو آپ کو لایا گیا ہے
ہر کوئی کر نہیں سکتا مرے باغات کی سیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک رانی نے کہانی سے نکلنا چاہا
پڑھنے والا اسے راجا سے حسیں لگتا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ خوبصورتی جو ساری میرے اندر ہے
وہ تیرے سیر پہ آنے کا ایک منظر ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترے جانے پہ ترازو کا بھرم ٹوٹ گیا
پانی کی سطح برابر نہ ہوئی آنکھوں سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلی ساعت ...شعر پورا... کر پائے گی
یا یہ مصرہ ...میرے جیسا... رہ جائے گا

(1) ووٹ وصول ہوئے

: مضامین سےمتعلقہ شعراء