بند کریں
شاعری مضامینانتخاب میرے کچھ دوستوں کے اشعار ملاحظہ کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تہذیب حافی

انتخاب کے مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
میرے کچھ دوستوں کے اشعار ملاحظہ کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تہذیب حافی
یہ کوئی انتخاب نہیں بس دوستوں کے کچھ اشعار یاد آرہے تھے تو لکھ دیے۔

یہ کوئی انتخاب نہیں بس دوستوں کے کچھ اشعار یاد آرہے تھے تو لکھ دیے ۔۔۔۔

تم نے کتنی دیر لگا دی پاس ہمارے آنے میں
ہم تبدیل ہوئے بستی میں اور بستی ویرانے میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فہیم شناس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خواب ایسا کہ دیکھتے رہیے
یاد ایسی کہ حافظہ لے جائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رسا چغتائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ان مکینوں کا سلوک اپنی جگہ
در و دیوار پہ حیرت ہے مجھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔کاشف حسین غائر۔۔۔۔۔۔۔۔

دیواروں سے باتیں کرتے کرتے میں نے
دیوارں کی باتیں سننا سیکھ لیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عمران شمشاد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک دم گھونٹ بھر لیا اُس نے
اور میں بچ گیا چھلکنے سے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔علی عدنان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تجھے قریب سمجھتے تھے گھر میں بیٹھے ہوئے
تری تلاش میں نکلے تو شہر پھیل گیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عباس تابش ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کل رات مجھے چوری کیا جا رہا تھا یار
اور میرے جاگنے پہ مجھے رکھ دیا گیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انجم سلیمی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عدو کی تیغ میں جو چہرہ دیکھتے تھے کبھی
اب ان کو گھر میں لگے آئینے ڈراتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ریاض مجید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جی نہیں مجھ کو نہیں دل میں اترنا آتا
میرے اک دوست کو یہ جادو گری آتی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرزا مراتب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنے محبوب کو اجازت دو
کہ وہ خوش رہ سکے تمھارے بغیر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادریس بابر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسے کہو جو بلاتا ہے گہرے پانی میں
کنارے سے بندھی کشتی کا مسئلہ سمجھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اظہر فراغ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں آنکھیں بند کیے گہر ے پانیوں میں گیا
سنا ہے کوئی اشارے سے روکتا بھی رہا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شبیر حسن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اتنی خوشبو کہاں سے لاتے ہیں
ان گلابوں کی مخبری کی جائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رضوان بابر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جس جگہ میں تمھیں لے آیا ہوں اس سے آگے
جتے رستے ہیں مرے گھر کی طرف جاتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ثنا اللہ ظہیر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُس نے اک دن مجھے ناکام کہا اور میں نے
خود کو اپنے بھی کسی کام نہیں آنے دیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سرور خان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تُو نے کیا کھول کے رکھ دی ہے لپیٹی ہوئی عمر
تُو نے کن آکری لمحوں میں پکارا ہے مجھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فیضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بڑوں پر منکشف تھی سہل انگاری ہماری
ہمیں اجداد کہتے تھے تمھارا کیا بنے گا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اختر عثمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لایا ہوں آپ کے لیے چاندی کی بالیاں
کانوں میں ڈال کر انہیں سونا بنائیے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اختر رضا سلیمی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ترے لیے تو نہیں ہے یہ واقعات کی بھیڑ
ٹھہر نا دوست تیرا غم بھی آنے والا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رفاقت راضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آئینہ مجھے یاد دلاتا ہے کہ میں ہوں
ورنہ تو مجھے بھول ہی جاتا ہے کہ میں ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سلیم ساگر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ مرے پاس ہے نہایت پاس
کیمرے ذوم کر لیے جائیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شاہد بلال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کہ چونچ ٹوٹ نہ جائے اداس چڑیا کی
ہم اپنے گھر میں لگے آیئنے پلٹتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عدنان بشیر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بانسوں کے جنگلوں سے گزرتی ہے میری سانس
تب جا کے چار بول سُریلے نکلتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سعید دوشی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم اس خاطر تری تصویر کا حصہ نہیں ہیں
ترے منظر میں اجائے نہ ویرانی ہماری

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حماد نیازی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ورنہ ساری گلی مہک اٹھتی
وہ کوئی اور تھا دریچے میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیاقت علی عاصم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زخم اور پیڑ نے اک ساتھ دعا مانگی ہے
دیکھیے پہلے یہاں کون ہرا ہوتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عابد ملک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھ کو جنگل میں مت بھیجو
میرے اندر آگ ہے سائیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔احمد شہریار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب جو پتھر ہے آدمی تھا کبھی
اس کو کہتے ہیں انتظار میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ افضل خان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بے سبب ٹہرے نہیں دنیا کے چوراہے پہ لوگ
ان کو بھی اُس نے کہا ہو گا ابھی آتا ہوں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ذیشان اطہر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی سادہ سا ورق ڈھونڈھ رہا تھا کل شام
ایک دفتر نکل آیا مری الماری سے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عتق جیلانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گر کسی نے خریدا نہ آج بھی مرا دن
تو معذرت میرے لیل و نہار تھک گیا میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سجاد بلوچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُدھر روشنی ہے سبھی اُس طرف جا رہے ہیں
کوئی ہے مجھے بھی ادھر سے اُدھر کرنے والا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کاشف مجید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں سوچتا ہوں کہ دم لیں تو میں انہیں ٹوکوں
مگر یہ لوگ لگاتار جھوٹ بولتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عمران عامی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم آپ اپنے تماشائی ہیں غنیمت ہے
کبھی تو ہوتے ہیں اس سے بھی کم تماشائی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ واجد امیر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ جو بادل ترے چہرے کی طرف دیکھتے ہیں
مسئلہ یہ ہے کہ اک رنگ دھنک میں کم ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شاہد ذکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بہت سے لوگ ہیں جو بول بھی نہیں سکتے
میں اپنے آپ کو اظہار تک تو لے آیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔احمد رضوان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اور پھر اُس کے تعاقب میں ہوئی عمر تمام
ایک تصویر اُڑی تیز ہوا میں ایسی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ توقیر تقی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنی قسمت میں سبھی کچھ تھا فقط پھول نہ تھے
تم اگر پھول نہ ہوتے تو ہمارے ہوتے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشفاق ناصر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُس نے آنکھوں سے پکارا مجھ کو
میں نے آواز کو اتے دیکھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زبیر قیصر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں بہت جلد بوڑھاپے میں چلا آیا تھا
بن ترے عمر کی رفتار بڑھانی پڑی تھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ممتاز گورمانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تُو نے مہتاب نکلتے ہوئے دیکھا ہے کبھی
اور مہتاب بھی ایسے کسی دروازے سے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اشرف یوسفی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ ہاتھ چھڑا رہی تھی اُس کو
معلوم نہ تھا میں جاگتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نذیر قیصر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُس نے بدلا ہے پیرھن اپنا
موسم ِ گل تو استعارہ ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔نذیر قیصرانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی ایسی بات بتا میں پتھر ہو جاؤں
پھر ایسا شعر سنا مری آنکھیں پھوٹ بہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عثمان ضیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُس نے تصویر ٹانک دی اپنی
ورنہ دیوار گرنے والی تھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سرفراز آرش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ جو ہم اتنی سہولت سے تجھے چاہتے ہیں
دوست اک عمر میں ملتی ہے یہ آسانی بھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سعود عثمانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عجب نہیں کی مجھے زندہ گارھنے والے
کل آ کے بھانک رہے ہوں مرے مزار کی خاک

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رحمان حفیظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بدن میں ریت بھر نہیں رہا ہوں میں
یہ ہو رہا ہے کر نہیں رہا ہوں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نوید رضا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تیری آنکھوں کے لیے اتنی سزا کافی ہے
آج کی رات مجھے خواب میں جلتا ہوا دیکھ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ابھیشیک شکلا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم تم ہیں جو بہہ رہے ہیں تہہ میں
دریا کا تو نام چل رہا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شاہین عباس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم انصاف نہیں کر پائے دل سے بھی دنیا سے بھی
تیری جانب مُڑ کر دیکھا یعنی جانب داری کی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ذلفقار عادل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں تری بزم ِ دل میں آ تو گیا
لگ رہا ہوں عجیب قبل از وقت

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اکرام عارفی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب ہم اک دوجے کے آنسو پونچھنے لگ جائیں گے
شاہ زادوں کی کہانی سن کے بچے سو گئے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شناور اسحاق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ جو ہم رو دیتے ہیں
کس کی ذمہ داری ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منیر سیفی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمام وقت ٹہلتے ہوئے گزرتا ہے
قفس میں بھی مرا شوق ِ سفر نہیں جاتا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انور شعور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمام آئینے ترتیبب سے رکھو محسن
وہ شخص نیند سے بیدار ہونے والا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ محسن اسرار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کر رہا ہوں میں ایک پھول پہ کام
روز اک پنکھڑی بناتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اکبر معصوم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ محبت بھی ایک نیکی ہے
آو دریا میں ڈال آتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انعام ندیم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم جو کہتے ہو دیکھ لی دنیا
اُس کو ہنستے ہوئے بھی دیکھا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جواد شیخ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ٹھوکر لگی تو صف کی طرح جسم کھل گیا
اک سمت رکھ دیا تھا کسی نے لپیٹ کر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔توقیر عباس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا ضروری ہے عشق پر ایمان
کیا سبھی لوگ لازمی لے آئیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔قمر رضا شہزاد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ﻭﻗﺖ ﺑﮩﺎ ﮐﺮ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﻧﺎﻡ ﻭ ﻧﺸﺎﮞ ﻣﮕﺮ
کوئی ﮨﻢ ﻣﯿﮟ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﻣﯿﮟ ﮨم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مقصود وفا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک بھی تیرے بحر کا قطرہ نہیں مری طرف
دفتر ِ تشنگی تو کھول مجھ سے حساب کر کے دیکھ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ علی زریون ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عیب دیوار کے ہوں گے ظاہر
مری تصویر ہٹا دی گئی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ندیم بھابھہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک دستک پہ وہ دروازہ نہیں کھولے گا
اُس کو معلوم جو ہے میں نے کھڑے رہنا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ احمد سلیم رفیع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ شوخ بنتا سنورتا ہے اور میں دیکھتا ہوں
مرا ہی دیکھنا بنتا ہے اور میں دیکھتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حامد محبوب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دل ترے نام بر بسایا گیا
تُو کہیں اور ہو گیا آباد

۔۔۔۔۔۔۔ذیشان حیدر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھ پر وہ مہرباں تھا فقط اس لیے، اُسے
کردار چاہیے تھا کہانی کے واسطے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رشد شاہین۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حضوری میں خلل سا آ رہا ہے
دیے کی لو ذرا مدھم عزیزم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خاور اسد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسطرح بیٹھ گیا ہوں میں تو
جیسے بنیاد میں پانی پڑ جائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شہزاد راؤ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہر ایک دائرہ مرکز سے ہٹنے والا ہے
میں سانس لینے میں تاخیر کرنے والا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عدنان سرمد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(3) ووٹ وصول ہوئے