Tehzeeb Hafi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے تہذیب حافی کی شاعری سے انتخاب

Tehzeeb Hafi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

نئے انداز سے بھرپور، جدید اور خوبصورت لب و لہجے کے نوجوان شاعر تہذیب حافی 5 دسمبر 1989 کو تونسہ شریف(ضلع ڈیرہ غازیخان) میں پیدا ہوئے

اصل نام تہذیب الحسن قلمی نام تہذیب حافی۔ نئے انداز سے بھرپور، جدید اور خوبصورت لب و لہجے کے نوجوان شاعر تہذیب حافی 5 دسمبر 1989 کو تونسہ شریف(ضلع ڈیرہ غازیخان) میں پیدا ہوئے۔ مہران یونیورسٹی سے سافٹ وئیر انجینرنگ کرنے کے بعد بہاولپر یونیورسٹی سے ایم اے اردو کیا۔ آج کل لاہور مین مقیم ہیں۔
ان کے دستیاب کلام سے چند اشعار احباب کی محبتوں کی نظر

ساری عمر اسی خواہش میں گزری ہے
دستک ہوگی اور دروازہ کھولوں گا
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرا موسموں سے تو پھر گلہ ہی فضول ہے
تجھے چھو کے بھی میں اگر ہرا نہیں ہو رہا
ترے جیتے جاگتے اور کوئی مرے دل میں ہے
مرے دوست کیا یہ بہت بُرا نہیں ہو رہا
۔۔۔۔۔۔

(جاری ہے)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم مری آنکھ کے بارے میں بہت پوچھتے ہو
یہ وہ کھڑکی ہے جو دریا کی طرف کھلتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تُو ادھر دیکھ مجھ سے باتیں کر
دوست چشمے تو پھوٹتے رہیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فریب دے کے ترا جسم جیت لوں لیکن
میں پیڑ کاٹ کے کشتی نہییں بناؤں گا
میں ایک فلم بناؤں گا اپنے ثروت پر
اُور اُس میں ریل کی پٹری نہیں بناوں گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شور تو وہ ہے جو کانوں کو نہ بھائے حافی
لے میں آئی ہوئی آواز بھی خاموشی ہے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کون ہماری پیاس پہ ڈاکہ ڈال گیا
کس نے مشکیزوں کے تسمے کھولے ہیں
ورنہ دھوپ کا پربت کس سے کٹتا تھا
اُس نے چھتری کھول کے رستے کھولے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اُس کو ہر روز بس یہی ایک جھوٹ سننے کو فون کرتا
سنو یہاں کوئی مسئلہ ہے تمھاری آواز کٹ رہی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترا چپ رہنا مرے ذہن میں کیا بیٹھ گیا
اتنی آوازیں تجھے دیں کہ گلا بیٹھ گیا
اتنا میٹھا تھا وہ غصے بھر لہجہ مت پوچھ
اُس نے جس جس کو بھی جانے کا کہا بیٹھ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُس کی تصویریں ہیں دلکش تو ہوں گی
جیسی دیواریں ہیں ویسا سایا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں تو آنکھیں دیکھ کے ہی بتلا دوں گا
تم میں سے کس کس نے دریا دیکھا ہے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بات ہے جو میں تجھ کو لکھ نہیں پا رہا
کوئی لفظ خط میں تجھے مٹا نظر آئے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تری تصویر ہٹ جائے گی لیکن
نظر دیوار پر جاتی رہے گی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری آنکھوں پہ دو مقدس ہاتھ
یہ اندھیرا بی روشنی ہے مجھے
میں کہ کاغذ کی ایک کشتی ہوں
پہلی بارش ہی آخری ہے مجھے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صحرا سے ہو کے باغ میں آیا ہوں سیر کو
ہاتھوں میں پھول ہیں مرے پاؤں میں ریت ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ سبھی لوگ ترے عشق میں ٹھکرائے گئے
ان مکانوں پہ نیا رنگ نہیں ہو سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھ کو چھونے کے بعد کیا ہو گا ؟
دیر تک ہاتھ کانپتے رہیں گے
۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تُو اگر جانے لگا ہے تو پلٹ کر مت دیکھ
موت لکھ کر تو قلم توڑ دیا جاتا ہے
میری لکنت پہ ترس کھاتے ہوئے دیکھ مجھے
کتنی مشکل سے ترا نام لیا جاتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نے کیسے اُس کے جسم کی خوشبو سے انکار کیا
اُس پر پانی پھینک کے دیکھو کچی مٹی جیسا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں چاہتا ہوں پرندے رہا کیے جائیں
میں چاہتا ہوں ترے ہونٹ سے ہنسی نکلے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُس کی زباں میں اتنا اثر ہے کہ نصف شب
وہ روشنی کی بات کرے اور دیا جلے
تم چاہتے ہو تم سے بچھڑ کر بھی خوش رہوں
یعنی ہوا بھی چلتی رہے اور دیا جلے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس لیے چھوڑ کے جانے لگے سب چارہ گراں
زخم سے عزت ِ مرہم نہیں رکھی جاتی
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم کیا جانو اُس دریا پر کیا گزری
تم نے تو بس پانی بھرنا چھوڑ دیا
بس کانوں پر ہاتھ رکھے تھے تھوڑی دیر
اور پھر اُس آواز نے پیچھا چھوڑ دیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم اُس کو مجبور کیے رکھنا باتیں کرتے رہنے پر
اتنی دیر میں میں نے اس کا لہجہ چوری کر لینا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب بھلا اپنے لیے بننا سنورنا کیسا
تجھ سے ملنا ہو تو تیار نہیں ہوتا میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنی عجلت میں کھینچی گئی
میں نہیں میری تصویر میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں آرہا تھا راستے میں پھول تھے
میں جا رہا ہوں کوئی روکتا نہیں
اُس اژدھے کی آنکھ پوچھتی رہی
کسی کو خوف آ رہا ہے یا نہیں
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
درد گھٹتا تو ہے پر ختم نہیں ہو سکتا
سانپ سوتا ہے مگر آنکھ کھلی رہتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ جانے کتنے پرندوں نے اُس میں شرکت کی
کل ایک پیڑ کی تقریب ِ رونمائی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس لیے گاؤں میں سیلاب آیا
ہم نے دریاؤں کی عزت نہیں کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اگلے سال پرندوں کا دن مناوں گا
مری قریب کے جنگل سے بات ہو گئی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک دریا کو پار کرنے کے بعد
جیب میں ریت کے سوا کیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تہذیب حافی

(7088) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعر

مزید مضامین

Nazeer Qaisar Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے جناب نذیر قیصر کی شاعری سے انتخاب

Nazeer Qaisar ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Samina Tabassum Aik Ba Shaoor Shaira (Saeed Ullah Qureshi)

ثمینہ تبسم ۔۔۔ ایک باشعور شاعرہ (سعید اللہ قریشی)

Samina Tabassum Aik ba shaoor Shaira (Saeed Ullah Qureshi)

Faizan Hashmi Ki Shaeri Me Se Intikhab

سر گودھا سے تعلق رکھنے والے خوبصورت شاعر فیضان ہاشمی کی شاعری سے انتخاب ۔۔۔۔۔۔۔۔ نصراللہ حارث

Faizan Hashmi ki shaeri me se intikhab

Ghulam Muhammad Qasir

غلام محمد قاصر

Ghulam Muhammad Qasir

Ahmad Khiyal Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے احمد خیال کی شاعری سے انتخاب

Ahmad Khiyal ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Hassan Abbasi Ka Khasoosi Interview

حسن عباسی کا خصوصی انٹرویو

Hassan Abbasi Ka Khasoosi Interview

Noor Mohammad Noor Kapoor Thalavi

نور محمد نور کپورتھلوی کے کلام میں عصری آ گہی کا شعور

noor Mohammad noor kapoor thalavi

Alaamton Ki Tanu Ka Shaair

علامتوں کے تنوع کا شاعر ____ابرار احمد

Alaamton ki tanu ka shaair

Haroon Tariq Ka Khasoosi Interview

ہارون طارق کا خصوصی انٹرویو

Haroon Tariq Ka Khasoosi Interview

Majeed Amjad Ki Shaeri Ka Tarjuma

مجید امجد کی شاعری کے انگریزی تراجم (عارفہ شہزاد )

Majeed Amjad ki shaeri ka tarjuma

BhaensaiN Palnay Wala Shaer

بھینسیں پالنے والا شاعر

BhaensaiN palnay wala shaer

Qamar Raza Shahzad Sb K Muntakhib Ashaar

ممتاز شاعر قمر رضا شہزاد صاحب کیے مجموعہء کلام یاددہانی کے بعد کہے گئے " تازہ کلام سے منتخب اشعار انتخاب : عتیق الرحمن صفی

Qamar Raza Shahzad sb k muntakhib ashaar

Aitbar Sajid Ka Khasoosi Interview

اعتبار ساجد کا خصوصی انٹرویو

Aitbar Sajid Ka Khasoosi Interview

Intikhaab By Tehzeeb Haafi

میرے کچھ دوستوں کے اشعار ملاحظہ کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تہذیب حافی

intikhaab by Tehzeeb Haafi

Rana Aamir Liaqat Ki Shaeri Se Intikhab

ادب نامہ کی طرف سے رانا عامر لیاقت کی شاعری سے انتخاب

Rana Aamir Liaqat ki shaeri se intikhab

Qais K Qabeelay Ka Fard

قیس کے قبیلے کا فرد ۔۔ مبشر سعید

qais k qabeelay ka fard

Your Thoughts and Comments

Tehzeeb Hafi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama. Read Special Urdu Poetry related articles, Latest Poetic Columns & Tributes on Urdu poets. Read article Tehzeeb Hafi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama and other Urdu shaiyre mazameen in Urdu. Read Urdu poets profiles, new poetry and mazameen like Tehzeeb Hafi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama only on UrduPoint.