بند کریں
شاعری مضامینانتخاب ممتاز شاعر قمر رضا شہزاد صاحب کیے مجموعہء کلام یاددہانی کے بعد کہے گئے " تازہ کلام سے منتخب اشعار انتخاب : عتیق الرحمن صفی

انتخاب کے مزید مضامین

- مزید مضامین
ممتاز شاعر قمر رضا شہزاد صاحب کیے مجموعہء کلام یاددہانی کے بعد کہے گئے " تازہ کلام سے منتخب اشعار
انتخاب : عتیق الرحمن صفی
ممتاز شاعر قمر رضا شہزاد صاحب کیے مجموعہء کلام یاددہانی کے بعد کہے گئے " تازہ کلام سے منتخب اشعار" آپ سب دوستوں کے ذوقِ مطالعہ کی نذر ...

ممتاز شاعر قمر رضا شہزاد صاحب کیے مجموعہء کلام یاددہانی کے بعد کہے گئے " تازہ کلام سے منتخب اشعار" آپ سب دوستوں کے ذوقِ مطالعہ کی نذر ...

مجھے خبر ہے خدا میرے انتظار میں ہے
میں آ رہا ہوں صفِ گمرہاں سے ہوتے ہوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کئی زمانوں کے اسرار پار کرنے پڑے
میں اپنے آپ تک آیا کہاں سے ہوتے ہوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھوا ضرور تھا لیکن مجھے نہیں معلوم
کہاں گیا وہ مرے جسم و جاں سے ہوتے ہوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سکوتِ شب میں اور کیا بنائوں گا
میں لفظ جوڑ کر صدا بنائوں گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہی بہت جو اِک چراغ بن سکے
میں اِس سے بڑھ کے اور کیا بنائوں گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ جنگ ہے تو پھر مرے عزیز میں
مکان کو بھی مورچہ بنائوں گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو چار ہیں پار اُترنے والے
میں نائو کو بھر نہیں رہا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تلوار بھی کھینچ لی ہے میں نے
اور وار بھی کر نہیں رہا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مری روشنی سے رواں تھی روشنی دہر میں
میں بجھا تو نور کسی دیے میں نہیں رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی میری طرح کا سر پھرا ترے دشت میں
کبھی تھا مگر مرے حافظے میں نہیں رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سمجھ رہا ہے جسے تُو کسی چراغ کی لو
یہ کائنات اسی لو سے جلنے والی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لہو سے گوندھنے والے کو بھی کہاں معلوم
یہ خاک کون سی صورت میں ڈھلنے والی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب اور کون سی وسعت مجھے سنبھالے گی
میں فکر مند تھا کون و مکان چھوڑتے وقت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھڑک اُٹھا تھا میں اپنے نواح میں شہزاد
دیے کی لو پہ لبوں کے نشاں چھوڑتے وقت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے نہ ماننے والے ضرور دیکھیں گے
کسی زمانہء آئندہ میں ظہور مرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی بھی شے یہاں ترتیب میں نہیں مرے دوست
یہ کائنات بھی دراصل ہے فتور مرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرا تو"میں" کی رفاقت میں سانس گھٹتا ہے
سو آئے اور کوئی توڑ دے غرور مرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی زمیں کے ہونٹ تر نہیں ہوئے
ابھی پیالہ خون سے بھرا نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ایک شاہ جس کے اختیار میں
کوئی محل کوئی حرم سرا نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر طرف میری خامشی کا شور
ان کہا ان سنا کلام ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوچ لینا یہ جنگ سے پہلے
صلح کا آخری پیام ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تُو مجھے مت سمجھ کھنڈر شہزاد
اِک عمارت کا انہدام ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے حجرے میں رکھے ہوئے ماہ و انجم ہٹائو میاں
یہ نہ ہو ایک دن سب کے سب میں بجھا دوں کسی لہر میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیکھئے اب کسی سے بھی میری ملاقات ممکن نہیں
جوبھی آیا ہے کہہ دو چلا جائے اِس آخری پہر میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محبتوں کے کئی واقعے سنائے گا
اگر کبھی کسی دریا سے تم کلام کرو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں تو ہم بھی نہیں آج کل
سو آئو تم ہمارے حجرہء تنہائی میں قیام کرو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنائی جائے کوئی داستاں محبت کی
مین تھک چکا ہوں مجھے تازہ دم کیا جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فلک کو سونپ دیئے جائیں یہ فلک زادے
زمیں کے بوجھ کو تھوڑا سا کم کیا جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لے گئے جھولیاں بھر بھر کے مجھے شہر کے لوگ
اپنے حصے میں بھی آیا نہ بچایا ہوا میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آگ کو روکنے والا نہیں کوئی شہزاد
ہر طرف پھیلتا جاتا ہوں جلایا ہوا میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس یاد رہ گیا تھا مجھے عشق عشق عشق
پھر یہ بھی لفظ میری زباں سے الگ ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل کون سے محاذ پہ ہارا ہے اپنی جان
یہ آخری سپاہی کہاں سے الگ ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نکلنا چاہتا ہوں اپنی ذات سے
مگر یہ دشت پار ہو نہیں رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں خیر ہوں کہ شر مجھے بتائیے
مرا کہیں شمار ہو نہیں رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ شہر جل رہا ہے اور کمال ہے
کوئی بھی سوگوار ہو نہیں رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعر: قمر رضا شہزاد

(0) ووٹ وصول ہوئے

: مضامین سےمتعلقہ شعراء