Qabil Ajmairi

قابل اجمیری

Qabil Ajmairi

راستہ ہے کہ کٹتا جاتا ہے فاصلہ ہے کہ کم نہیں ہوتا وقت کرتا ہے پرورش برسوں حادثہ ایک دم نہیں ہوتا

قابلؔ اجمیری کا اصل نام عبدالرحیم اور قابلؔ تخلص تھا۔۲۷؍اگست ۱۹۳۱ء کو قصبہ چرلی، ضلع اجمیر میں پیدا ہوئے۔قابل کے مکان کے عقبی دروازے کے سامنے خواجہ معین الدین چشتیؒ کی درگاہ ہے۔ قابل نے اپنا لڑکپن اسی درسگاہ شریف کے علمی وادبی اور روحانی ماحول میں گزارا۔ انھوں نے قوالیوں کی صورت میں مختلف شعرا کی غزلیں اور نعتیں اتنی بار سنیں کہ بہت سا کلام حفظ ہوگیا اور یہ ان کے شاعر بننے کا موجب بھی ہوا۔

قابل ارمان اجمیری اور معنی اجمیری سے اصلاح لینے لگے۔تقسیم ہند کے بعد پاکستان آگئے۔مفلسی اور بیماری کی وجہ سے ۳۱ سال کی عمر میں ۳؍اکتوبر۱۹۶۲ء کو حیدرآباد میں انتقال کرگئے۔
حکومت سند ھ نے انھیں ’’شاعر سندھ‘‘ کے خطاب سے نوازا۔
۔۔۔۔۔۔

(جاری ہے)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کتابیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیدہ بیدار ۔

۔۔۔۔۔۔ پہلا مجموعہ کلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1963ء
خونِ رگِ جاں ۔۔۔۔ دوسرا مجموعہ کلام ۔۔۔۔ 1966ء
کلیاتِ قابل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1992ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیات قابل سے منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راستہ ہے کہ کٹتا جاتا ہے
فاصلہ ہے کہ کم نہیں ہوتا
وقت کرتا ہے پرورش برسوں
حادثہ ایک دم نہیں ہوتا
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم نہ مانو، مگر حقیقت ہے
عشق انسان کی ضرورت ہے
جی رہا ہوں اس اعتماد کے ساتھ
زندگی کو مری ضرورت ہے
حسن ہی حسن، جلوے ہی جلوے
صرف احساس کی ضرورت ہے
اس کے وعدے پہ ناز تھے کیا کیا
اب دروبام سے ندامت ہے
اس کی محفل میں بیٹھ کر دیکھو
زندگی کتنی خوبصورت ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔
خیالِ سود نہ اندیشہ زیاں ہے ابھی
چلے چلو کہ مذاقِ سفر جواں ہے ابھی
رکا رکا سا تبسم، جھکی جھکی سی نظر
تمہیں سلیقہ بے گانگی کہاں ہے ابھی
سکونِ دل کی تمنا سے فائدہ قابل
نفس نفس غمِ جاناں کی داستاں ہے ابھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رہبر جو ہمیں ٹھوکریں کھانے نہیں دیتا
ڈرتا ہے کہیں راستہ ہموار نہ ہو جائے
میخانہ بھی اک کارگہِ شیشہ گری ہے
پیمانہ کہیں ٹوٹ کے تلوار نہ ہو جائے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں بھی شہرِ نگاراں میں لے چلو یارو
کسی کے عشق کا آزار ہم بھی رکھتے ہیں
قدم قدم پہ چٹکتی ہیں شوق کی کلیاں
صبا کی شوخی رفتار ہم بھی رکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل کی دھڑکن کا اعتبار نہیں
ورنہ آواز تو تمہاری ہے
لطفِ صبحِ نشاط مجھ سے پوچھ
میں نے شامِ الم گزاری ہے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مقاماتِ فکر و نظر کون سمجھے
یہاں لوگ نقشِ قدم دیکھتے ہیں
بصد رشک قابل کی آوارگی کو
غزالانِ دیر و حرم دیکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات تاریک، راہ نا ہموار
شمعِ غم کو ہوا نہ دے جانا
بے کسی سے بڑی امیدیں ہیں
تم کوئی آسرا نہ دے جانا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی مشکل سے سمجھے گا زمانہ
نیا نغمہ نئی آواز ہوں میں
مجھی پہ ختم ہیں سارے ترانے
شکستِ ساز کی آواز ہوں میں
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آؤ اپنی زمیں کو چمکائیں
چاند تاروں کا اعتبار نہیں
حسنِ ترتیب ہے دلیلِ چمن
ورنہ صحرا میں کیا بہار نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تضادِ جذبات میں یہ نازک مقام آیا تو کیا کرو گے
میں رو رہا ہوں تو ہنس رہے ہو میں مسکرایا تو کیا کرو گے
مجھے تو اس درجہ وقتِ رخصت سکوں کی تلقین کر رہے ہو
مگر کچھ اپنے لئے بھی سوچا میں یاد آیا تو کیا کرو گے
کچھ اپنے دل پہ بھی زخم کھاؤ مرے لہو کی بہار کب تک
مجھے سہارا بنانے والو، میں لڑکھڑایا تو کیا کرو گے
ابھی تو تنقید ہو رہی ہے مرے مذاقِ جنوں پہ لیکن
تمہاری زلفوں کی برہمی کا سوال آیا تو کیا کرو گے
ابھی تو دامن چھڑا رہے ہو، بگڑ کے قابل سے جا رہے ہو
مگر کبھی دل کی دھڑکنوں میں شریک پایا تو کیا کرو گے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چمن کے غنچوں نے رنگ بدلا، فلک کے تاروں سے ساتھ چھوڑا
میں جن سہاروں سے مطمئن تھا انہی سہاروں نے ساتھ چھوڑا
خود اہلِ کشتی کی سازشیں ہیںکہ نا خدا کی نوازشیں ہیں
وہیں تلاطم کو ہوش آیا جہاں کناروں نے ساتھ چھوڑا
مرے گناہِ نظر سے پہلے چمن چمن میری آبرو تھی
مجھے شعورِ جمال آیا تو گلعذاروں نے ساتھ چھوڑا
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیشہ شمع بھڑکے گی، سدا پیمانہ چھلکے گا
تری محفل میں ہم چھوڑ آئے ہیں جوشِ بیاں اپنا
جمالِ دوست کو پیہم نکھرنا ہے، سنورنا ہے
محبت نے اٹھایا ہے ابھی پردہ کہاں اپنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت ہیں میکدے میں لڑکھڑانے جھومنے والے
وقارِ لغزشِ پیرِ مغاں کچھ اور ہوتا ہے
بہت دلچسپ ہیں ناصح کی باتیں بھی مگر قابل
محبت ہو تو اندازِ بیاں کچھ اور ہوتا ہے
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جانے کیا ہو پلک جھپکنے میں
زندگی جاگتی ہی رہتی ہے
جھوٹے وعدوں کی لذتیں مت پوچھ
آنکھ در سے لگی ہی رہتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دن نکلتا ہے کس تمنا میں
رات کس آسرے پہ آتی ہے
جب وہ گیسو بکھیر دیتے ہیں
زندگی راہ بھول جاتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہر مقام سے پہلے وہ ہر مقام کے بعد
سحر تھی شام سے پہلے سحر ہے شام کے بعد
مجھی پہ اتنی توجہ مجھی سے اتنا گریز
مرے سلام سے پہلے مرے سلام کے بعد
چرغِ بزمِ ستم ہیں ہمارا حال نہ پوچھ
جلے تھے شام سے پہلے بجھے ہیں شام کے بعد
یہ رات کچھ بھی نہیں تھی یہ رات سب کچھ ہے
طلوعِ جام سے پہلے طلوعِ جام کے بعد
رہِ طلب میں قدم لڑکھڑا ہی جاتے ہیں
کسی مقام سے پہلے کسی مقام کے بعد
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خیالِ خاطرِ احباب اور کیا کرتے
جگر پہ زخم بھی کھائے شمار بھی نہ کیا
نجانے زندگی کیسے گذر گئی اے دوست
کہیں ٹھہر کے ترا انتظار بھی نہ کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب یہ عالم ہے کہ غم کی بھی خبر ہوتی نہیں
اشک بہہ جاتے ہیں لیکن آنکھ تر ہوتی نہیں
پھر کوئی کم بخت کشتی نذرِ طوفاں ہو گئی
ورنہ ساحل پر اداسی اس قدر ہوتی نہیں
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کسی کی زلف پریشاں کسی کا دامن چاک
جنوں کو لوگ تماشا بنائے پھرتے ہیں
قدم قدم پہ لیا انتقام دنیا نے
تجھی کو جیسے گلے سے لگائے پھرتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دن چھپا اور غم کے ساۓ ڈھلے
آرزو کے نۓ چراغ جلے
ہم بدلتے ہیں رخ ہواؤں کا
آۓ دنیا ہمارے ساتھ چلے
لب پہ ہچکی بھی ہے تبسم بھی
جانے ہم کس سے مل رہے ہیں گلے
دل کے ان حوصلوں کا حال نہ پوچھ
جو ترے دامن کرم میں پلے
کون یاد آ گیا اذاں کے وقت
بجھتا جاتا ہے دل چراغ چلے
مصلحت سرنگوں خرد خاموش
عشق کے آ گے کس کی دال گلے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(3525) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعر

مزید مضامین

Iliyas Babur Aewan Ki Shaairi Par Shams Ur Rehman Farooqi Sahib Ka Mazmon

الیاس بابر اعوان کی شاعری پر شمس الرحمن فاروقی صاحب کا مضمون

iliyas babur aewan ki shaairi par Shams ur rehman farooqi sahib ka mazmon

Aziz Faisal Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے عزیز فِصل کی شاعری سے انتخاب

Aziz Faisal ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Syed Ali Abbas Jalalpuri

سید علی عباس جلالپوری تحریر : پروفیسر لالہ رخ بخاری

Syed Ali Abbas Jalalpuri

Adan Nama Ki Taraf Se Azhar Faragh Ki Shaeri Se Kiya Gaya Intikhab

ادب نامہ کی جانب سے عمدہ شاعر اظہر فراغ کی شاعری سے انتخاب

Adan Nama ki taraf se Azhar Faragh ki shaeri se kiya gaya intikhab

Qais K Qabeelay Ka Fard

قیس کے قبیلے کا فرد ۔۔ مبشر سعید

qais k qabeelay ka fard

Zulfiqar Adil Ki Shaeri Se Intikhab

زوللفقار عادل کے مجموعہ سے چند منتخب اشعار (ابرار احمد)

Zulfiqar Adil ki shaeri se intikhab

Rana Aamir Liaqat Ki Shaeri Se Intikhab

ادب نامہ کی طرف سے رانا عامر لیاقت کی شاعری سے انتخاب

Rana Aamir Liaqat ki shaeri se intikhab

Fehmida Riaz Sahiba Se Aik Mulaqat

فہمیدہ ریاض سے ملاقات ( بشکریہ: بی بی سی اردو منظرنامہ)

Fehmida Riaz sahiba se aik mulaqat

Majeed Amjad Ki Shaeri Ka Tarjuma

مجید امجد کی شاعری کے انگریزی تراجم (عارفہ شہزاد )

Majeed Amjad ki shaeri ka tarjuma

Anwer Shaoor Ki Shairi Se Intikhab

جناب انور شعور کی شاعری سے انتخاب

Anwer Shaoor ki shairi se intikhab

Zamin Abbas Kazmi Ki Shaeri Se Intikhab By Adab Nama

ادب نامہ کی طرف سے ضامن عباس کاظمی کی شاعری سے انتخاب

Zamin Abbas Kazmi ki shaeri se intikhab by Adab Nama

Ahmed Shehryaar K Mjmoay Aqleem Me Se Intekhab

احمد شہریار کے مجموئے اقلیم میں سے انتخاب

Ahmed shehryaar k mjmoay Aqleem me se intekhab

Zia Ul Mustafa Turk Ki Kitab Ka Tajzia

ضیاءالمصطفیٰ ترک کی کتاب پر ایک تجزیہ "شہر پس _چراغ" سے گزرتے هوئے۔حماد نیازی

Zia ul mustafa turk ki kitab ka tajzia

Zia Turk Ki Shairi Me Se Intekhab By Hammad Niazi

ضیا المصطفی ترک کی شاعری میں سے انتخاب

Zia turk ki shairi me se intekhab by Hammad Niazi

BesveN Sadi Ka Ehd Saz Shair .... Munir Niazi

بیسویں صدی کا عہد ساز شاعر ۔۔۔۔ منیر نیازی

BesveN sadi ka ehd saz shair .... Munir Niazi

Kaee Zamanoon Ka Shaair ..Afzal Khan

کئی زمانوں کا شاعر ۔۔۔ افضل خان

kaee zamanoon ka shaair ..Afzal Khan

Your Thoughts and Comments

Qabil Ajmairi. Read Special Urdu Poetry related articles, Latest Poetic Columns & Tributes on Urdu poets. Read article Qabil Ajmairi and other Urdu shaiyre mazameen in Urdu. Read Urdu poets profiles, new poetry and mazameen like Qabil Ajmairi only on UrduPoint.