چوہدری نثار نے خاموشی سے ن لیگ کیساتھ کیا گیم کھیل دی

حامد میر کا دلچسپ انکشاف۔۔۔ پی ٹی آئی کا فائدہ ہی فائدہ ہوگیا

Sumaira Faqir Hussain سمیرا فقیرحسین ہفتہ جون 12:07

چوہدری نثار نے خاموشی سے ن لیگ کیساتھ کیا گیم کھیل دی
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 02 جون 2018ء) : نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے معروف صحافی حامد میر نے کہا کہ پی ٹی آئی نسبتاً ایک نئی جماعت ہے۔ پی ٹی آئی بے شک بنی 1995ء ، 1996ء میں تھی لیکن پی ٹی آئی کی سیاسی اُڑان 2011ء میں سب نے دیکھی ، جس کا مطلب ہے کہ پی ٹی آئی کے سیاست میں اس لحاظ سے چھ سات سال بنتے ہیں۔ جبکہ اس کے مقابلے میں مسلم لیگ ن پرانی جماعت ہے۔

مسلم لیگ ن میں ایک آدمی ہے جس کا نام ہے چودھری نثار علی خان۔۔ اس شخص نے پبلک میں گفتگو شروع کر دی ہے ، وہ شخص پہلے اپنے بیانات میں نواز شریف کو نشانہ بناتا تھا لیکن اب انہوں نے شہباز شریف کے بارے میں بھی بیانات دینا شروع کر دئے ہیں۔ اور حیران کُن بات یہ ہے کہ مسلم لیگ ن کی قیادت اس معاملے پر ٹس سے مس نہیں ہو رہی۔

(جاری ہے)

چودھری نثار علی خان تاحال پارٹی کے اندر ہیں، آخری دنوں میں قومی اسمبلی کا جو اجلاس ہوا ہے، اس میں ہم نے دیکھا کہ پارٹی رہنماؤں کی چودھری نثار علی خان کے ساتھ ہنس ہنس کر باتیں ہو رہی ہیں، ایم این اے ایم پی ایز ان کو گھیرا ڈال کر بیٹھے ہوئے ہیں ، چودھری نثار علی خان اسی طریقے سے پارٹی کے اندر ان ہیں اور ایکٹو ہیں۔

مسلم لیگ ن یہ بھی تو دیکھے۔ ہم پی ٹی آئی پر تنقید کر رہے ہیں اور جائز تنقید کر رہے ہیں، لیکن یہ جو اتنی پرانی سیاسی جماعت ہے اس کے اندر چودھری نثار کے معاملے پر اب تک یہ لوگ کوئی فیصلہ نہیں کر سکے کہ چودھری نثار علی خان کو پارٹی میں رکھنا ہے یا نہیں رکھنا ، چودھری نثار علی خان نے بھی آپ کو امتحان میں ڈال رکھا ہے اور جان بوجھ کر پارٹی نہیں چھوڑ رہے۔

حامد میر نے کہا کہ وزیر اعظم شاہد خاقان سے لے کرجونئیر منسٹر تک، ہم نے قومی اسمبلی کے اندر دیکھا کہ کیپٹن صفدر بھی آکر چودھری نثار کو سلام کر رہے ہیں، جو کہ بری بات نہیں ہے۔ لیکن ایک کنفیوژن پیدا کر دی گئی ہے ، ایک شخص جو نواز شریف کے بارے میں بول رہا ہے،اور کہہ رہا ہے کہ نواز شریف نے پارٹی کی پالیسی کو تباہ کر دیا ہے، جو اب نواز شریف کے ساتھ نظر تک نہیں آتا وہ ابھی تک پارٹی کے اندر بیٹھا ہوا ہے۔

کیا پی ٹی آئی میں کوئی ایسا بندہ ہے جو عمران خان کو چیلنج کر کے پارٹی میں رہ سکتا ہے؟ پی ٹی آئی کی غلطیاں اپنی جگہ پر لیکن ایسا کبھی نہیں ہوا۔ اس بات پر مسلم لیگ کی وکٹ پی ٹی آئی کے سامنے کمزور ہے کیونکہ مسلم لیگ ن میں نواز شریف کو چیلنج کرنے والا تاحال پارٹی کے اندر موجود ہے۔ پی ٹی آئی اور مسلم لیگ ن میں یہی ایک واضح فرق ہے۔