نوازشریف کے تینوں ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ کرنے کی استدعا پر فیصلہ محفوظ

جمعرات جون 21:20

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 21 جون2018ء) اسلام آباد ہائی کورٹ نے نوازشریف کیخلاف تینوں ریفرنسز کا ایک ساتھ فیصلہ کرنے کی استدعا پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔میڈیا رپورٹ کے مطابق نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ ملزمان کی جانب سے اپنے دفاع میں کچھ پیش نہیں کیا گیا ،ْسردار مظفر عباسی کے مطابق احتساب عدالت نے آرڈر شیٹ میں بھی یہی کہا کہ چونکہ ملزمان نے دفاع پیش نہیں کیا اس لیے صورتحال مختلف ہوچکی ہے۔

زیر سماعت درخواست میں صرف حتمی دلائل موخر کرنے کی استدعا کی گئی ہے۔

(جاری ہے)

مریم نواز اور کیپٹن صفدر کے وکیل امجد پرویز نے کہا کہ احتساب عدالت کو 128 میں سے 5 سوالات کو موخر کرنے کی درخواست دی جو مسترد کر دی گئی۔ یہ پہلا کیس ہے جس میں رات 10 بجے تک بھی کارروائی چلتی رہی ہے۔ احتساب عدالت نے فیصلے میں کہا ہے کہ جن وجوہات کی بنا پر پہلے ایک ساتھ فیصلہ سنانے کا کہا گیا وہ اب نہیں رہیں۔۔نواز شریف کے وکیل سعد ہاشمی نے عدالت کو بتایا واجد ضیاء کا بیان قلمبند کرنے سے متعلق جو طریقہ کار طے کیا گیا اس پر عمل نہیں ہوا۔ دونوں وکلاء اور نیب پراسیکیوٹر کے دلائل مکمل ہونے کے بعد عدالت نے فیصلہ محفوظ کر لیا۔