مقامی عدالت نے شعیب شیخ و دیگر کے خلاف جعلی ڈگری کے مقدمے میں ایف آئی اے کے اسپیشل پبلک پراسکیوٹر سے منسٹری آف لاء کا نوٹیفکیشن طلب کرلیا

بدھ نومبر 19:38

مقامی عدالت نے شعیب شیخ و دیگر کے خلاف جعلی ڈگری کے مقدمے میں ایف آئی ..
کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 14 نومبر2018ء) مقامی عدالت نے ایگزیکٹ کے سی ای او شعیب شیخ و دیگر کے خلاف جعلی ڈگری کے مقدمے میں ایف آئی اے کے اسپیشل پبلک پراسکیوٹر سے منسٹری آف لاء کا نوٹفیکشن طلب کرلیاہے۔بدھ کو کراچی سٹی کورٹ میں ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج جنوبی کے روبرو ایگزیکٹ کے سی ای او شعیب شیخ و دیگر کے خلاف جعلی ڈگری کی سماعت ہوئی۔

ایگزیکٹ کے سی ای او ملزم شعیب شیخ، انکی اہلیہ اور دیگر ملزمان کو پیش کیا گیا۔ عدالت میں ملزم شعیب شیخ اور ایف آئی اے پراسکیوٹر کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ ہوا۔ عدالت میں ملزم شعیب شیخ نے ایف آئی اے کے وکیل پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ یہ کون ہیں۔ ایف آئی اے کے وکیل نے ملزم شعیب شیخ پر اعتراض کیا اور کہا کہ آپ چپ ہو کر کھڑے ہوں یہ وکلا کی جگہ پر کیسے کھڑا ہے۔

(جاری ہے)

عدالت نے شعیب شیخ کو دوسرے طرف کھڑے ہونے کی ہدایت کردی۔ ملزم کے وکیل نے موقف اپنایا ایف آئی اے اسپشل پراسکیوٹر کی خدمات حاصل نہیں کرسکتی ہے۔ سپریم کورٹ کے فیصلے موجود ہیں۔ ایف آئی اے کے وکیل نے موقف اپنایا میرے پاس بھی تمام دستاویزات موجود ہیں۔ ملزم کے وکیل موقف اختیار کیا کہ ہم نے اس حوالے سے سندھ ہائی کورٹ سے رجوع کر رکھا ہے۔

ہماری درخواست منظور کرکے اسپیشل پبلک پراسکیوٹر کو پیروی سے روکا جائے۔ عدالت نے ریماکس دیئے کہ ہمارے پاس سپریم کورٹ واضح ہدایات موجود ہیں مقدمے کو 6 ہفتوں میں نمٹانے کی۔ عدالت نے آئندہ سماعت پر ایف آئی اے کے اسپیشل پبلک پراسکیوٹر سے منسٹری آف لاء کا نوٹفیکشن طلب کرلیا۔تفتیشی افسر نے کہا کہ مفرور ملزمان کی جائیداد سے متعلق تفصیلات کے تمام متعلقہ اداروں کو لکھ دیا گیا ہے۔ عدالت نے کیس کی مزید سماعت 20 نومبر تک ملتوی کردی۔